ایران میں احتجاج "برہمی اور آزادی کی شدید خواہش” کا اظہار

تحریر: نِک کلارک

بے روزگاری، غربت اور بالائی سیاسی طبقے کے خلاف ایران بھر میں پھیلنے والے احتجاج کو حکومتی فورسز کی جابرانہ کارروائیوں کا سامنا ہے۔

ایران بھر کے شہروں اور قصبوں میں ہزاروں افراد کے احتجاج 2009 کے بعد بے چینی کی دوسری بڑی لہر ہیں۔ پولیس سے ٹکراؤ کے بعد سوموار تک کم از کم 15 افراد کی موت کی تصدیق ہو چکی تھی۔ احتجاجوں کے سلسلے کا یہ پانچواں دن تھا۔

احتجاج گزشتہ ہفتے جمعرات کو اس وقت شروع ہوئے جب شہر مشہد میں صدر حسن روحانی نے مجوزہ بجٹ پیش کیا جس میں کٹوتیوں (آسٹیرٹی) اور قیمتوں میں اضافے کا اعلان کیا گیا۔

"ایران میں احتجاج "برہمی اور آزادی کی شدید خواہش” کا اظہار” پڑھنا جاری رکھیں

کرد استاد کے لیے ایرانی سپریم کورٹ نے سزائے موت برقرار رکھی

<!– @page { size: 8.5in 11in; margin: 0.79in } P { margin-bottom: 0.08in } –>

گیارہ جولائی 2008ء کو ایران کی سپریم کورٹ نے کرد استاد، صحافی اور شہری آزادیوں کے لیے کام کرنے والے کارکن فرزاد کمانگر کی سزائے موت کو برقرار رکھا۔ ان پر کردستان ورکرز پارٹی کا رکن ہونے کا الزام ہے۔ "کرد استاد کے لیے ایرانی سپریم کورٹ نے سزائے موت برقرار رکھی” پڑھنا جاری رکھیں