کلیاتِ فیض کا پہلا حصّہ

فیض احمد فیض

دستِ صبا، نقشِ فریادی اور زنداں نامہ کا کلام

لفظ لفظ

متاع لوح و قلم چھن گئی تو کیا غم ہے

کہ خونِ دل میں ڈبو لی ہیں انگلیاں میں نے

زباں پہ مہر لگی ہے تو کیا کہ رکھ دی ہے

ہر ایک حلقۂ زنجیر میں زباں میں نے

دستِ صبا، نقشِ فریادی اور زنداں نامہ کا کلام

فہرست

نظمیں

غزلیں

قطعات اور اشعار

نظمیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دلے بفروختم جانے خریدم

(نظامی)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فہرست

نظمیں

اے دلِ بیتاب ٹھہر!

سیاسی لیڈر کے نام

مرے ہمدم، مرے دوست

صبح آزادی

لوح قلم

شورشِ بربط و نَے

دامنِ یوسف

طوق و دار کا موسم

سرِ مقتل 18

۔۔۔۔۔۔تمہارے حسن کے نام

ترانہ

(نذرِ سودا)

دو عشق

نوحہ

ایرانی طلبا کے نام

نثار میں تیری گلیوں کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شیشوں کا مسیحا کوئی نہیں

زنداں کی ایک شام

زنداں کی ایک صبح

یاد

خدا وہ وقت نہ لائے۔۔۔۔۔۔

انتہائے کار

انجام

سردوِ شبانہ

آخری خط

حسینۂ خیال سے!

مری جاں اب بھی اپنا حسن واپس پھیر دے مجھ کو

بعد از وقت

سرودِ شبانہ

انتظار

تہِ نجوم

حسن اور موت

تین منظر

سرود

یاس

آج کی رات

ایک رہگزر پر

ایک منظر

میرے ندیم!

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

سوچ

رقیب سے

تنہائی

چند روز اور مری جان!

مرگِ سوز محبت

کتے

بول

اقبال

موضوعِ سخن

ہم لوگ

شاہراہ

اے حبیبِ عنبر دست!

ملاقات

واسوخت

اے روشنیوں‌کے شہر

ہم جو تاریک راہوں میں مارے گئے

دریچہ

درد آئے گا دبے پاؤں۔۔۔۔۔۔

AFRICA COME BACK

یہ فصل امیدوں کی ہمدم

بنیاد کچھ تو ہو

کوئی عاشق کسی محبوبہ سے!

غزلیں

اشعار

اے دلِ بیتاب ٹھہر!

تیرگی ہے کہ امنڈتی ہی چلی آتی ہے

شب کی رگ رگ سے لہو پھوٹ رہا ہو جیسے

چل رہی ہے کچھ اس انداز سے نبضِ ہستی

دونوں عالم کا نشہ ٹوٹ رہا ہو جیسے

رات کا گرم لہو اور بھی بہہ جانے دو

یہی تاریکی تو ہے غازۂ رخسارِ سحر

صبح ہونے ہی کو ہے اے دلِ بیتاب ٹھہر

ابھی زنجیر چھنکتی ہے پسِ پردۂ ساز

مطلق الحکم ہے شیرازۂ اسباب ابھی

ساغرِ ناب میں آنسو بھی ڈھلک جاتے ہیں

لغزشِ پا میں ہے پابندئ آداب ابھی

اپنے دیوانوں کو دیوانہ تو بن لینے دو

اپنے میخانوں کو میخانہ تو بن لینے دو

جلد یہ سطوتِ اسباب بھی اُٹھ جائے گی

یہ گرانبارئ آداب بھی اُٹھ جائے گی

خواہ زنجیر چھنکتی ہی، چھنکتی ہی رہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سیاسی لیڈر کے نام

سالہا سال یہ بے آسرا جکڑے ہوئے ہاتھ

رات کے سخت و سیہ سینے میں پیوست رہے

جس طرح تنکا سمندر سے ہو سر گرمِ ستیز

جس طرح تیتری کہسار پہ یلغار کرے

اور اب رات کے سنگین و سیہ سینے میں

اتنے گھاؤ ہیں کہ جس سمت نظر جاتی ہے

جابجا نور نے اک جان سا بن رکھا ہے

دور سے صبح کی دھڑکن کی صدا آتی ہے

تیرا سرمایہ، تری آس یہی ہاتھ تو ہیں

اور کچھ بھی تو نہیں پاس، یہی ہاتھ تو ہیں

تجھ کو منظور نہیں غلبۂ ظلمت، لیکن

تجھ کو منظور ہے یہ ہاتھ قلم ہو جائیں

اور مشرق کی کمیں گہ میں دھڑکتا ہوا دن

رات کی آہنی میت کے تلے دب جائے!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مرے ہمدم، مرے دوست

گر مجھے اس کا یقیں ہو مرے ہمدم، مرے دوست

گر مجھے اس کا یقین ہو کہ ترے دل کی تھکن

تیری آنکھوں کی اداسی، ترے سینے کی جلن

میری دلجوئی، مرے پیار سے مت جائے گی

گرمرا حرفِ تسلی وہ دوا ہو جس سے

جی اٹھے پھر ترا اُجڑا ہوا بے نور دماغ

تیری پیشانی سے دھل جائیں یہ تذلیل کے داغ

تیری بیمار جوانی کو شفا ہو جائے

گر مجھے اس کا یقیں ہو مرے ہمدم، مرے دوست!

روز و شب، شام و سحر میں تجھےبہلاتا رہوں

میں تجھے گیت سناتا رہوں ہلکے، شیریں،

آبشاروں کے، بہاروں کے ، چمن زاروں کے گیت

آمدِ صبح کے، مہتاب کے، سیاروں کے گیت

تجھ سے میں حسن و محبت کی حکایات کہوں

کیسے مغرور حسیناؤں کے برفاب سے جسم

گرم ہاتھوں کی حرارت سے پگھل جاتے ہیں

کیسے اک چہرے کے ٹھہرے ہوئے مانوس نقوش

دیکھتے دیکھتے یک لخت بدل جاتے ہیں

کس طرح عارضِ محبوب کا شفاف بلور

یک بیک بادۂ احمر سے دہک جاتا ہے

کیسے گلچیں کے لیے جھکتی ہے خود شاخِ گلاب

کس طرح رات کا ایوان مہک جاتا ہے

یونہی گاتا رہوں، گاتا رہوں تیری خاطر

گیت بنتا رہوں، بیٹھا رہوں تیری خاطر

یہ مرے گیت ترے دکھ کا مداوا ہی نہیں

نغمہ جراح نہیں، مونس و غم خوار سہی

گیت نشتر تو نہیں، مرہمِ آزار سہی

تیرے آزار کا چارہ نہیں، نشتر کے سوا

اور یہ سفاک مسیحا مرے قبضے میں نہیں

اس جہاں کے کسی ذی روح کے قبضے میں نہیں

ہاں مگر تیرے سوا، تیرے سوا، تیرے سوا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صبح آزادی

اگست 47ء

یہ داغ داغ اُجالا، یہ شب گزیدہ سحر

وہ انتظار تھا جس کا، یہ وہ سحر تو نہیں

یہ وہ سحر تو نہیں جس کی آرزو لے کر

چلے تھے یار کہ مل جائے گی کہیں نہ کہیں

فلک کے دشت میں تاروں کی آخری منزل

کہیں تو ہوگا شبِ سست موج کا ساحل

کہیں تو جاکے رکے گا سفینۂ غمِ دل

جواں لہو کی پراسرار شاہراہوں سے

چلے جو یار تو دامن پہ کتنے ہاتھ پڑے

دیارِ حسن کی بے صبر خواب گاہوں سے

پکارتی رہیں باہیں، بدن بلاتے رہے

بہت عزیز تھی لیکن رخِ سحر کی لگن

بہت قریں تھا حسینانِ نور کا دامن

سبک سبک تھی تمنا، دبی دبی تھی تھکن

سنا ہے ہو بھی چکا ہے فراقِ ظلمت و نور

سنا ہے ہو بھی چکا ہے وصالِ منزل و گام

بدل چکا ہے بہت اہلِ درد کا دستور

نشاطِ وصل حلال و عذابِ ہجر حرام

جگر کی آگ، نظر کی امنگ، دل کی جلن

کسی پہ چارۂ ہجراں کا کچھ اثر ہی نہیں

کہاں سے آئی نگارِ صبا، کدھر کو گئی

ابھی چراغِ سرِ رہ کو کچھ خبر ہی نہیں

ابھی گرانئ شب میں کمی نہیں آئی

نجاتِ دیدہ و دل کی گھڑی نہیں آئی

چلے چلو کہ وہ منزل ابھی نہیں آئی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لوح قلم

ہم پرورشِ لوح قلم کرتے رہیں گے

جو دل پہ گزرتی ہے رقم کرتے رہیں گے

اسبابِ غمِ عشق بہم کرتے رہیں گے

ویرانئ دوراں پہ کرم کرتے رہیں گے

ہاں تلخئ ایام ابھی اور بڑھے گی

ہاں اہلِ ستم، مشقِ ستم کرتے رہیں گے

منظور یہ تلخی، یہ ستم ہم کو گوارا

دم ہے تو مداوائے الم کرتے رہیں گے

مے خانہ سلامت ہے، تو ہم سرخئ مے سے

تزئینِ درو بامِ حرم کرتے رہیں گے

باقی ہے لہو دل میں تو ہر اشک سے پیدا

رنگِ لب و رخسارِصنم کرتے رہیں گے

اک طرزِ تغافل ہے سو وہ ان کو مبارک

اک عرضِ تمنا ہے سو ہم کرتے رہیں گے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شورشِ بربط و نَے

پہلی آواز

اب سعِی کا امکاں اور نہیں پرواز کا مضموں ہو بھی چکا

تاروں پہ کمندیں پھینک چکے، مہتاب پہ شبخوں ہو بھی چکا

اب اور کسی فردا کے لیے ان آنکھوں سے کیا پیماں کیجے

کس خواب کے جھوٹے افسوں سے تسکینِ دل ناداں کیجے

شیرینئ لب، خوشبوئے دہن، اب شوق کا عنواں کوئی نہیں

شادابئ دل، تفریحِ نظر، اب زیست کا درماں کوئی نہیں

جینے کے فسانے رہنے دو، اب ان میں الجھ کر کیا لیں گے

اک موت کا دھندا باقی ہے، جب چاہیں گے نپٹالیں گے

یہ تیرا کفن، وہ میرا کفن، یہ مری لحد، وہ تیری ہے

دوسری آواز

ہستی کی متاعِ بے پایاں ، جاگیر تری ہے نہ میری ہے

اس بزم میں اپنی مشعلِ دل، بسمل ہے تو کیا، رخشاں ہے تو کیا

یہ بزم چراغاں رہتی ہے، اک طاق اگر ویراں ہے تو کیا

افسردہ ہیں گر ایام ترے، بدلا نہیں مسلکِ شام و سحر

ٹھہرے نہیں موسمِ گل کے قدم ، قائم ہے جمالِ شمس و قمر

آباد ہے وادئ کاکل و لب، شاداب و حسیں گلگشتِ نظر

مقسوم ہے لذتِ دردِ جگر، موجود ہے نعمتِ دیدۂ تر

اس دیدۂ تر کا شکر کرو، اس ذوق نظر کا شکر کرو

اس شام و سحر کا شکر کرو، اس شمس و قمر کا شکر کرو

پہلی آواز

گر ہے یہی مسلکِ شمس و قمر ان شمس و قمر کا کیا ہوگا

رعنائئ شب کا کیا ہوگا، اندازِ سحر کا کیا ہوگا

جب خونِ جگر برفاب بنا، جب آنکھیں آہن پوش ہوئیں

اس دیدۂ تر کا کیا ہوگا، اس ذوقِ نظر کا کیا ہوگا

جب شعر کے خیمے راکھ ہوئے، نغموں کی طنابیں ٹوٹ گئیں

یہ ساز کہاں سر پھوڑیں گے، اس کلکِ گہر کا کیا ہوگا

جب کنجِ قفس مسکن ٹھہرا، اور جیب و گریباں طوق و رسن

آئے کہ نہ آئے موسمِ گل، اس دردِ جگر کا کیا ہوگا

دوسری آواز

یہ ہاتھ سلامت ہیں جب تک، اس خوں میں حرارت ہے جب تک

اس دل میں صداقت ہے جب تک، اس نطق میں طاقت ہے جب تک

ان طوقِ سلاسل کو ہم تم، سکھلائیں گے شورشِ بربط و نَے

وہ شورش جس کے آگے زبوں ہنگامۂ طبلِ قیصر و کَے

آزاد ہیں اپنے فکر و عمل بھر پور خزینہ ہمت کا

اک عمر ہے اپنی ہر ساعت، امروز ہے اپنا ہر فردا

یہ شام و سحر یہ شمس و قمر، یہ اختر و کوکب اپنے ہیں

یہ لوح قلم، یہ طبل و علم، یہ مال و حشم سب اپنے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دامنِ یوسف

جاں بیچنے کو آئے تو بے دام بیج دی

اے اہلِ مصر، وضعِ تکلف تو دیکھیے

انصاف ہے کہ محکمِ عقوبت سے بیشتر

اک بار سوئے دامن یوسف تو دیکھیے!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

طوق و دار کا موسم

روش روش ہیے وہی انتظار کا موسم

نہیں ہے کوئی بھی موسم، بہار کا موسم

گراں ہے دل پہ غمِ روزگار کا موسم

ہے آزمائشِ حسنِ نگار کا موسم

خوشا نظارۂ رخسارِ یار کی ساعت

خوشا قرارِ دلِ بے قرار کا موسم

حدیثِ بادہ و ساقی نہیں تو کس مصرف

حرامِ ابرِ سرِ کوہسار کا موسم

نصیبِ صحبتِ یاراں نہیں تو کیا کیجے

یہ رقص سایۂ سرو و چنار کا موسم

یہ دل کے داغ تو دکھتے تھی یوں بھی پر کم کم

کچھ اب کے اور ہے ہجرانِ یار کا موسم

یہی جنوں کا، یہی طوق و دار کا موسم

یہی ہے جبر، یہی اختیار کا موسم

قفس ہے بس میں تمہارے، تمہارے بس میں نہیں

چمن میں آتشِ گل کے نکھار کا موسم

صبا کی مست خرامی تہِ کمند نہیں

اسیرِ دام نہیں ہے بہار کا موسم

بلا سے ہم نے نہ دیکھا تو اور دیکھیں گے

فروغِ گلشن و صوتِ ہزار کا موسم

سرِ مقتل

(قوالی)

کہاں ہے منزلِ راہِ تمنا ہم بھی دیکھیں گے

یہ شب ہم پر بھی گزرے گی، یہ فردا ہم بھی دیکھیں گے

ٹھہر اے دل، جمالِ روئے زیبا ہم بھی دیکھیں گے

ذرا صیقل تو ہولے تشنگی بادہ گساروں کی

دبا رکھیں گے کب تک جوشِ صہبا ہم بھی دیکھیں گے

اٹھا رکھیں گے کب تک جام و مینا ہم بھی دیکھیں گے

صلا آتو چکے محفل میں اُس کوئے ملامت سے

کسے روکے گا شورِ پندِ بے جا ہم بھی دیکھیں گے

کسے ہے جاکے لوٹ آنے کا یارا ہم بھی دیکھیں گے

چلے ہیں جان و ایماں آزمانےآج دل والے

وہ لائیں لشکرِ اغیار و اعدا ہم بھی دیکھیں گے

وہ آئیں تو سرِ مقتل،تماشا ہم بھی دیکھیں گے

یہ شب کی آخری ساعت گراں کیسی بھی ہو ہمدم

جو اس ساعت میں پنہاں ہے اجالا ہم بھی دیکھیں گے

جو فرقِ صبح پر چمکے گا تارا ہم بھی دیکھیں گے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔تمہارے حسن کے نام

سلام لکھتا ہے شاعر تمہارے حسن کے نام

بکھر گیا جو کبھی رنگِ پیرہن سرِ بام

نکھر گئی ہے کبھی صبح، دوپہر ، کبھی شام

کہیں جو قامتِ زیبا پہ سج گئی ہے قبا

چمن میں سرو و صنوبر سنور گئے ہیں تمام

بنی بساطِ غزل جب ڈبو لیے دل نے

تمہارے سایۂ رخسار و لب میں ساغر و جام

سلام لکھتا ہے شاعر تمہارے حسن کے نام

تمہارے ہاتھ پہ ہے تابشِ حنا جب تک

جہاں میں باقی ہے دلدارئ عروسِ سخن

تمہارا حسن جواں ہے تو مہرباں ہے فلک

تمہارا دم ہے تو دمساز ہے ہوائے وطن

اگر چہ تنگ ہیں اوقات ، سخت ہیں آلام

تمہاری یاد سے شریں ہے تلخئ ایام

سلام لکھتا ہے شاعر تمہارے حسن کے نام

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ترانہ

دربارِ وطن میں جب اک دن سب جانے والے جائیں گے

کچھ اپنی سزا کو پہنچیں گے ، کچھ اپنی جزا لے جائیں گے

اے خاک نشینو اٹھ بیٹھو، وہ وقت قریب آ پہنچا ہے

جب تخت گرائے جائیں گے، جب تاج اچھالے جائیں گے

اب ٹوٹ گریں گی زنجیریں اب زندانوں کی خیر نہیں

جو دریا جھوم کے اُٹھے ہیں، تنکوں سے نہ ٹالے جائیں گے

کٹتے بھی چلو، بڑھتے بھی چلو، بازو بھی بہت ہیں، سر بھی بہت

چلتے بھی چلو، کہ اب ڈیرے منزل ہی پہ ڈالے جائیں گے

اے ظلم کے ماتو لب کھولو، چپ رہنے والو چپ کب تک

کچھ حشر تو ان سے اُٹھے گا۔ کچھ دور تو نالے جائیں گے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(نذرِ سودا)

فکر دلدارئ گلزار کروں یا نہ کروں

ذکرِ مرغانِ گرفتار کروں یا نہ کروں

قصۂ سازشِ اغیار کہوں یانہ کہوں

شکوۂ یارِ طرحدار کروں یا نہ کروں

جانے کیا وضع ہے اب رسمِ وفا کی اے دل

وضعِ دیرینہ پہ اصرار کروں یا نہ کروں

جانے کس رنگ میں تفسیر کریں اہلِ ہوس

مدحِ زلف و لب و رخسار کروں یا نہ کروں

یوں بہار آئی ہے امسال کہ گلشن میں صبا

پوچھتی ہے گزر اس بار کروں یا نہ کروں

گویا اس سوچ میں ہے دل میں لہو بھر کے گلاب

دامن و جیب کو گلنار کروں یا نہ کروں

ہے فقط مرغِ غزلخواں کہ جسے فکر نہیں

معتدل گرمئ گفتار کروں یا نہ کروں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دو عشق

(۱)

تازہ ہیں ابھی یاد میں اے ساقئ گلفام

وہ عکسِ رخِ یار سے لہکے ہوئے ایام

وہ پھول سی کھلتی ہوئی دیدار کی ساعت

وہ دل سا دھڑکتا ہوا امید کا ہنگام

امید کہ لو جاگا غم دل کا نصیبہ

لو شوق کی ترسی ہوئی شب ہو گئی آخر

لوڈوب گئے درد کے بے خواب ستارے

اب چمکے گا بے صبر نگاہوں کا مقدر

اس بام سے نکلے ترے حسن کا خورشید

اُس کنج سے پھوٹے گی کرن رنگِ حنا کی

اس در سے بہے گا تری رفتار کا سیماب

اُس راہ پہ پھولے گی شفق تیری قبا کی

پھر دیکھے ہیں وہ ہجر کے تپتے ہوئے دن بھی

جب فکرِ دل و جاں میں فغاں بھول گئی ہے

ہر شب وہ سیہ بوجھ کہ دل بیٹھ گیا ہے

ہر صبح کی لوتیر سی سینے میں لگی ہے

تنہائی میں کیا کیا نہ تجھے یاد کیا ہے

کیا کیا نہ دلِ زار نے ڈھونڈی ہیں پناہیں

آنکھوں سے لگایا ہے کبھی دست صبا کو

ڈالی ہیں کبھی گردنِ مہتاب میں باہیں

(۲)

چاہا ہے اسی رنگ سے لیلائے وطن کو

تڑپا ہے اسی طور سے دل اس کی لگن میں

ڈھونڈی ہے یونہی شوق نے آسائشِ منزل

رخسار کے خم میں کبھی کاکل کی شکن میں

اُس جانِ جہاں کو بھی یونہی قلب و نظر نے

ہنس ہنس کے صدا دی، کبھی رو رو کے پکارا

پورے کیے سب حرفِ تمنا کے تقاضے

ہر درد کو اجیالا، ہر اک غم کو سنوارا

واپس نہیں پھیرا کوئی فرمان جنوں کا

تنہا نہیں لوٹی کبھی آواز جرس کیی

خیریّتِ جاں، راحتِ تن، صحتِ داماں

سب بھول گئیں مصلحتیں اہل ہوس کی

اس راہ میں جو سب پہ گزرتی ہے وہ گزری

تنہا پسِ زنداں، کبھی رسوا سرِ بازار

گرجے ہیں بہت شیخ سرِ گوشۂ منبر

کڑکے ہیں بہت اہلِ حکم برسرِ دربار

چھوڑا نہیں غیروں نے کوئی ناوکِ دشنام

چھوٹی نہیں اپنوں سے کوئی طرزِ ملامت

اس عشق، نہ اُس عشق پہ نادم ہے مگر دل

ہر داغ ہے ، اس دل میں بجز داغِ ندامت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نوحہ

مجھ کو شکوہ ہے مرے بھائی کہ تم جانے ہوۓ

لے گئے ساتھ مری عمرِ گزشتہ کی کتاب

اس میں تو میری بہت قیمتی تصویریں تھیں

اس میں بچپن تھا مرا، اور مرا عہدِ شباب

اس کے بدلے مجھے تم دے گئے جاتے جاتے

اپنے غم کا یہ دمکتا ہوا خوں رنگ گلاب

کیا کروں بھائی ، یہ اعزاز میں کیونکر پہنوں

مجھ سے لے لو مری سب چاک قمیضوں کا حساب

آخری بار ہے، لو مان لو اک یہ بھی سوال

آج تک تم سے میں لوٹانہیں مایوسِ جواب

آکے لے جاؤ تم اپنا یہ دمکتا ہوا پھول

مجھ کو لوٹا دو مری عمرِ گزشتہ کی کتاب

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایرانی طلبا کے نام

جو امن اور آزادی کی جدوجہد میں کام آئے

یہ کون سخی ہیں

جن کے لہوکی

اشرفیاں، چھن چھن، چھن چھن،

دھرتی کے پیہم پیاسے

کشکول میں ڈھلتی جاتی ہیں

کشکول کو بھرتی جاتی جاتی ہیں

یہ کون جواں ہیں ارضِ عجم

یہ لکھ لُٹ

جن کے جسموں کے

بھرپور جوانی کا کندن

یوں خاک میں ریزہ ریزہ ہے

یوں کوچہ کوچہ بکھرا ہے

اے ارضِ عجم، اے ارضِ عجم

کیوں نوچ کے ہنس ہنس پھینک دئے

ان آنکھوں نے اپنے نیلم

ان ہونٹوں نے اپنے مرجاں

ان ہاتوں کی“ بے کل چاندی

کس کام آئی، کس ہاتھ لگی؟“

اے پوچھنے والے پردیسی!

یہ طفل و جواں

اُس نور کے نورس موتی ہیں

اُس آگ کی کچی کلیاں ہیں

جس میٹھے فور اور کڑوی آگ

سے ظلم کی اندھی رات میں پھوٹا

صبح بغاوت کا گلشن

اور صبح بغاوت کا گلشن

اور صبح ہوئی من من، تن تن،

ان جسموں کا چاندی سونا

ان چہروں کے نیلم، مرجاں،

جگ مگ جگ مگ، رَخشاں رَخشاں

جو دیکھنا چاہے پردیسی

پاس آئے دیکھے جی بھر کر

یہ زیست کی رانی کا جھومر

یہ امن کی دیوی کا کنگن!“

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نثار میں تیری گلیوں کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نثار میں تری گلیوں کے اے وطن کہ جہاں

چلی ہے رسم کہ کوئی نہ سر اُٹھا کے چلے

جو کوئی چاہنے والا طواف کو نکلے

نظر چرا کے چلے، جسم و جاں بچا کے چلے

ہے اہل دل کے لیے اب یہ نظمِ بست و کشاد

کہ سنگ و خشت مقید ہیں اور سگ آزاد

بہت ہے ظلم کہ دستِ بہانہ جو کے لیے

جو چند اہل جنوں تیرے نام لیوا ہیں

بنے ہیں اہلِ ہوس، مدعی بھی منصف بھی

کسیے وکیل کریں، کس سے منصفی چاہیں

مگر گزارنے والوں کے دن گزرتے ہیں

ترے فراق میں یوں صبح شام کرتے ہیں

بجھا جو روزنِ زنداں تو دل یہ سمجھا ہے

کہ تیری مانگ ستاروں سے بھر گئی ہوگی

چمک اُٹھے ہیں سلاسل تو ہم نے جانا ہے

کہ اب سحر ترے رخ پر بکھر گئی ہوگی

غرض تصورِ شام و سحر میں جیتے ہیں

گرفتِ سایۂ دیوار و در میں جیتے ہیں

یونہی ہمیشہ الجھتی رہی ہے ظلم سے خلق

نہ اُن کی رسم نئی ہے، نہ اپنی ریت نئی

یونہی ہمیشہ کھلائے ہیں ہم نے آگ میں پھول

نہ اُن کی ہار نئی ہے نہ اپنی جیت نئی

اسی سبب سے فلک کا گلہ نہیں کرتے

ترے فراق میں ہم دل بُرا نہیں کرتے

گر آج تجھ سے جدا ہیں تو کل بہم ہوں گے

یہ رات بھر کی جدائی تو کوئی بات نہیں

گر آج اَوج پہ ہے طالعِ رقیب تو کیا

یہ چار دن کی خدائی تو کوئی بات نہیں

جو تجھ سے عہدِ وفا استوار رکھتے ہیں

علاجِ گردشِ لیل و نہار رکھتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شیشوں کا مسیحا کوئی نہیں

موتی ہو کہ شیشہ، جام کہ دُر

جو ٹوٹ گیا، سو ٹوٹ گیا

کب اشکوں سے جڑ سکتا ہے

جو ٹوٹ گیا ، سو چھوٹ گیا

تم ناحق ٹکڑے چن چن کر

دامن میں چھپائے بیٹھے ہو

شیشوں کامسیحا کوئی نہیں

کیا آس لگائے بیٹھے ہو

شاید کہ انہی ٹکڑوں میں کہیں

وہ ساغرِ دل ہے جس میں کبھی

صد ناز سے اُترا کرتی تھی

صہبائے غمِ جاناں کی پری

پھر دنیا والوں نے تم سے

یہ ساغر لے کر پھوڑ دیا

جو مے تھی بہادی مٹی میں

مہمان کا شہپر توڑ دیا

یہ رنگیں ریزے ہیں شاید

اُن شوخ بلوریں سپنوں کے

تم مست جوانی میں جن سے

خلوت کو سجایا کرتے تھے

ناداری، دفتر، بھوک اور غم

ان سپنوں سے ٹکراتے رہے

بے رحم تھا چومکھ پتھراؤ

یہ کانچ کے ڈھانچے کیا کرتے

یا شاید ان ذروں میں کہیں

موتی ہے تمہاری عزت کا

وہ جس سے تمہارے عجز پہ بھی

شمشاد قدوں نے رشک کیا

اس مال کی دھن میں پھرتے تھے

تاجر بھی بہت، رہزن بھی کئی

ہے چورنگر، یا مفلس کی

گرجان بچی تو آن گئی

یہ ساغر، شیشے، لعل و گہر

سالم ہوں تو قیمت پاتے ہیں

یوں ٹکڑے ٹکڑے ہوں، تو فقط

چھبتے ہیں، لہو رُلواتے ہیں

تم ناحق شیشے چن چن کر!

دامن میں چھپائے بیٹھے ہو

شیشوں کا مسیحا کوئی نہیں

کیا آس لگائے بیٹھے ہو

یادوں کے گریبانوں کے رفو

پر دل کی گزر کب ہوتی ہے

اک بخیہ اُدھیڑا، ایک سیا

یوں عمر بسر کب ہوتی ہے

اس کارگہِ ہستی میں جہاں

یہ ساغر، شیشے ڈھلتے ہیں

ہر شے کا بدل مل سکتا ہے

سب دامن پر ہو سکتے ہیں

جو ہاتھ بڑھے ، یاور ہے یہاں

جو آنکھ اُٹھے، وہ بختاور

یاں دھن دولت کا انت نہیں

ہوں گھات میں ڈاکو لاکھ ، مگر

کب لوٹ چھپٹ سے ہستی کی

دو کانیں خالی ہوتی ہیں

یاں پربت پربت ہیرے ہیں

یاں ساگر ساگر موتی ہیں

کچھ لوگ ہیں جو اس دولت پر

پردے لٹکائے پھرتے ہیں

ہر پربت کو، ہرساگر کو

نیلام چڑھائے پھرتے ہیں

کچھ وہ بھی ہیں لڑ بھِڑ کر

یہ پردے نوچ گراتے ہیں

ہستی کے اُٹھائی گیروں کی

ہر چال اُلجھائے جاتے ہیں

ان دونوں میں رَن پڑتا ہے

نِت بستی بستی نگر نگر

ہر بستے گھر کے سینے میں

ہر چلتی راہ کے ماتھے پر

یہ کالک بھرتے پھرتے ہیں

وہ جوت جگاتے رہتے ہیں

یہ آگ لگاتے پھرتے ہیں

وہ آگ بجھائے رہتے ہیں

سب ساغر، شیشے، لعل و گوہر

اس بازی میں بَد جاتے ہیں

اُٹھو سب خالی ہاتھوں کو

اس رَن سے بلاوے آتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زنداں کی ایک شام

شام کے پیچ و خم ستاروں سے

زینہ زینہ اُتر رہی ہے رات

یوں صبا پاس سے گزرتی ہے

جیسے کہہ دی کسی نے پیار کی بات

صحنِ زنداں کے بے وطن اشجار

سرنگوں ،محو ہیں بنانے میں

دامنِ آسماں پہ نقش و نگار

شانۂ بام پر دمکتا ہے!

مہرباں چاندنی کا دستِ جمیل

خاک میں گھل گئی ہے آبِ نجوم

نور میں گھل گیا ہے عرش کا نیل

سبز گوشوں میں نیلگوں سائے

لہلہاتے ہیں جس طرح دل میں

موجِ دردِ فراقِ یار آئے

دل سے پیہم خیال کہتا ہے

اتنی شیریں ہے زندگی اس پل

ظلم کا زہر گھولنے والے

کامراں ہو سکیں گے آج نہ کل

جلوہ گاہِ وصال کی شمعیں

وہ بجھا بھی چکے اگر تو کیا

چاند کو گل کریں تو ہم جانیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

زنداں کی ایک صبح

رات باقی تھی ابھی جب سرِ بالیں آکر

چاند نے مجھ سے کہا۔۔۔“جاگ سحر آئی ہے

جاگ اس شب جو مئے خواب ترا حصہ تھی

جام کے لب سے تہِ جام اتر آئی ہے“

عکسِ جاناں کو وداع کرکے اُٹھی میری نظر

شب کے ٹھہرے ہوئے پانی کی سیہ چادر پر

جابجا رقص میں آنے لگے چاندی کے بھنور

چاند کے ہاتھ سے تاروں کے کنول گر گر کر

ڈوبتے، تیرتے، مرجھاتے رہے، کھلتے رہے

رات اور صبح بہت دیر گلے ملتے رہے

صحنِ زنداں میں رفیقوں کے سنہرے چہرے

سطحِ ظلمت سے دمکتے ہوئے ابھرے کم کم

نیند کی اوس نے ان چہروں سے دھو ڈالا تھا

دیس کا درد، فراقِ رخِ محبوب کا غم

دور نوبت ہوئی، پھرنے لگے بیزار قدم

زرد فاقوں کے ستائے ہوئے پہرے والے

اہلِ زنداں کے غضبناک ، خروشاں نالے

جن کی باہوں میں پھرا کرتے ہیں باہیں ڈالے

لذتِ خواب سے مخمور ہوائیں جاگیں

جیل کی زہر بھری چور صدائیں جاگیں

دور دروازہ کھلا کوئی، کوئی بند ہوا

دور مچلی کوئی زنجیر ، مچل کر روئی

دور اُترا کسی تالے کے جگر میں خنجر

سر ٹپکنے لگا رہ رہ کے دریچہ کوئی

گویا پھر خواب سے بیدار ہوئے دشمنِ جاں

سنگ و فولاد سے ڈھالے ہوئے جناتِ گراں

جن کے چنگل میں شب و روز ہیں فریاد کناں

میرے بیکار شب و روز کی نازک پریاں

اپنے شہپور کی رہ دیکھ رہے ہیں یہ اسیر

جس کے ترکش میں ہیں امید کے جلتے ہوئے تیر

(ناتمام)

یاد

دشتِ تنہائی میں، اے جانِ جہاں، لرزاں ہیں

تیری آواز کے سائے، ترے ہونٹوں کے سراب

دشتِ تنہائی میں، دوری کے خس و خاک تلے

کھل رہے ہیں، تیرے پہلو کے سمن اور گلاب

اٹھ رہی ہے کہیں قربت سے تری سانس کی آنچ

اپنی خوشبو میں سلگتی ہوئی مدھم مدھم

دور۔۔۔افق پار چمکتی ہوئی قطرہ قطرہ

گر رہی ہے تری دلدار نظر کی شبنم

اس قدر پیار سے، اے جانِ جہاں، رکھا ہے

دل کے رخسار پہ اس وقت تری یاد نے ہات

یوں گماں ہوتا ہے، گرچہ ہے ابھی صبح فراق

ڈھل گیا ہجر کا دن آبھی گئی وصل کی رات

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

خدا وہ وقت نہ لائے۔۔۔۔۔۔

خدا وہ وقت نہ لائے کہ سوگوار ہو تو

سکوں کی نیند تجھے بھی حرام ہو جائے

تری مسرّتِ پیہم تمام ہو جائے

تری حیات تجھے تلخ جام ہو جائے

غموں سے آئینۂ دل گداز ہو تیرا

ہجومِ یاس سے بیتاب ہو کے رہ جائے

وفورِ درد سے سیماب ہو کے رہ جائے

ترا شباب فقط خواب ہو کے رہ جائے

غرورِ حسن سراپا نیاز ہو تیرا

طویل راتوں میں تو بھی قرار کو ترسے

تری نگاہ کسی غمگسار کو ترسے

خزاں رسیدہ تمنا بہار کو ترسے

کوئی جبیں نہ ترے سنگِ آستاں پہ جھکے

کہ جنسِ عجزو عقیدت سے تجھ کو شاد کرے

فریبِ وعدۂ فردا پہ اعتماد کرے

خدا وہ وقت نہ لائے کہ تجھ کو یاد آئے

وہ دل کہ تیرے لیے بیقرار اب بھی ہے

وہ آنکھ جس کو ترا انتظار اب بھی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انتہائے کار

پندار کے خوگر کو

ناکام بھی دیکھو گے؟

آغاز سے واقف ہو

انجام بھی دیکھو گے

رنگینئ دنیا سے

مایوس سا ہو جانا

دکھتا ہوا دل لے کر

تنہائی میں کھو جانا

ترسی ہوئی نظروں کو

حسرت سے جھکا لینا

فریاد کے ٹکڑوں کو

آہوں میں چھپا لینا

راتوں کی خموشی میں

چھپ کر کبھی رو لینا

مجبور جوانی کے

ملبوس کو دھولینا

جذبات کی وسعت کو

سجدوں سے بسا لینا

بھولی ہوئی یادوں کو

سینے سے لگا لینا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انجام

ہیں لبریز آہوں سے ٹھنڈی ہوائیں

اداسی میں ڈوبی ہوئی ہیں گھٹائیں

محبت کی دنیا پہ شام آ چکی ہے

سیہ پوش ہیں زندگی کی فضائیں

مچلتی ہیں سینے میں لاکھ آرزوئیں

تڑپتی ہیں آنکھوں میں لاکھ التجائیں

تغافل کے آغوش میں سو رہے ہیں

تمہارے ستم اور میری وفائیں

مگر پھر بھی اے میرے معصوم قاتل

تمہیں پیار کرتی ہیں میری دعائیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سردوِ شبانہ

گم ہے اک کیف میں فضائے حیات

خامشی سجدۂ نیاز میں ہے

حسنِ معصوم خوابِ ناز میں ہے

اے کہ تو رنگ و بوو کا طوفاں ہے

اے کہ تو جلوہ گر بہار میں ہے

زندگی تیرے اختیار میں ہے

پھول لاکھوں برس نہیں رہتے

دو گھڑی اور ہے بہارِ شباب

آکہ کچھ دل کی سن سنالیں ہم

آمحبت کے گیت گالیں ہم

میری تنہائیوں پہ شام رہے؟

حسرتِ دید نا تمام رہے؟

دل میں بیتاب ہے صدائے حیات

آنکھ گوہر نثار کرتی ہے

آسماں پر اداس ہیں تارے

چاندنی انتظار کرتی ہے

آ کہ تھوڑا سا پیار کر لیں ہم

زندگی زر نگار کر لیں ہم!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آخری خط

وہ وقت مری جان بہت دور نہیں ہے

جب درد سے رک جائیں گی سب زیست کی راہیں

اور حد سے گزر جائے گا اندوہِ نہانی

تھک جائیں گی ترسی ہوئی ناکام نگاہیں

چھن چائیں گے مجھ سے مرے آنسو مری آہیں

چھن جائے گی مجھ سے مری بے کار جوانی

شاید مری الفت کو بہت یاد کرو گی

اپنے دلِ معصوم کو ناشاد کرو گی

آؤ گی مری گور پہ تم اشک بہانے

نوخیز بہاروں کے حسیں پھول چڑھانے

شاید مری تربت کو بھی ٹھکرا کے چلو گی

شاید مری بے سود وفاؤں پہ ہنسو گی

اس وضع کرم کا بھی تمہیں پاس نہ ہوگا

لیکن دلِ ناکام کو احساس نہ ہوگا

القصّہ مآل غمِ الفت پہ ہنسو تم

یا اشک بہاتی رہو، فریاد کرو تم

ماضی پہ ندامت ہوتمہیں یا کہ مسرت

خاموش پڑا سوئے گا وا ماندۂ الفت

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسینۂ خیال سے!

مجھے دے دے

رسیلے ہونٹ، معصومانہ پیشانی، حسیں آنکھیں

کہ میں اک بار پھر رنگینیوں میں غرق ہو جاؤں!

مری ہستی کو تیری اک نظر آغوش میں لے لے

ہمیشہ کے لیے اس دام میں محفوظ ہو جاؤں

ضیاء حسن سے ظلماتِ دنیا میں نہ پھر آؤں

گزشتہ حسرتوں کے داغ میرے دل سے دھل جائیں

میں آنے والے غم کی فکر سے آزاد ہو جاؤں

مرے ماضی و مستقبل سراسر محو ہو جائیں

مجھےوہ اک نظر، اک جاودانی سی نظر دے دے

(بروئننگ)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مری جاں اب بھی اپنا حسن واپس پھیر دے مجھ کو

مری جاں اب بھی اپنا حسن واپس پھیر دے مجھ کو

ابھی تک دل میں تیرے عشق کی قندیل روشن ہے

ترے جلؤوں سے بزمِ زندگی جنت بدامن ہے

مری روح اب بھی تنہائی میں تجھ کو یاد کرتی ہے

ہر اک تارِ نفس میں آرزو بیدار ہے اب بھی

ہر اک بے رنگ ساعت منتظر ہے تیری آمد کی

نگاہیں بچھ رہی ہیں راستہ ازکار ہےاب بھی

مگر جانِ حزیں صدمے سہے گی آخرش کب تک

تری بے مہریوں پر جان دے گی آخرش کب تک؟

تیری آواز میں سوئی ہوئی شیرینیاں آخر

مرے دل کی فسردہ خلوتوں میں جا نہ پائیں گی

یہ اشکوں کی فراوانی سے دھندلائی ہوئی آنکھیں

تری رعنائیوں کی تمکنت کو بھول جائیں گی

پکاریں گے تجھے تو لب کوئی لذّت نہ پائیں گے

گلو میں تیری الفت کے ترانے سوکھ جائیں گے

مبادا یاد ہائے عہدِ ماضی محو ہو جائیں

یہ پارینہ فسانے موج ہائے غم میں کھو جائیں

مرے دل کی تہوں سے تیری صورت ڈھل کے بہہ جائے

حریم عشق کی شمع درخشاں بجھ کے رہ جائے

مبادا اجنبی دنیا کی ظلمت گھیر لے تجھ کو!

مری جاں اب بھی اپنا حسن واپس پھیر دے مجھ کو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بعد از وقت

دل کو احساس سے دوچار نہ کر دینا تھا

سازِ خوابیدہ کو بیدار نہ کر دینا تھا

اپنے معصوم تبسم کی فروانی کو

وسعتِ دید پہ گلبار نہ کر دینا تھا

شوقِ مجبور کو بس ایک جھلک دکھلا کر

واقفِ لذّتِ تکرار نہ کر دینا تھا

چشمِ مشتاق کی خاموش تمناؤں کو

یک بیک مائلِ گفتار نہ کر دینا تھا

جلوۂ حسن کو مستور ہی رہنے دیتے

حسرتِ دل کو گنہگار نہ کر دینا تھا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سرودِ شبانہ

نیم شب، چاند خود فراموشی

محفلِ ہست و بود ویراں ہے

پیکرِ التجا ہے خاموشی

بزمِ انجم فسردہ ساماں ہے

آبشارِ سکوت جاری ہے

چار سو بے خودی سی طاری ہے

زندگی جزوِ خواب ہے گویا

ساری دنیا سراب ہے گویا

سورہی ہے گھنے درختوں پر!

چاندنی کی تھکی ہوئی آواز

کہکشاں نیم وا نگاہوں سے

کہہ رہی ہے حدیثِ شوقِ نیاز

سازِ دل کے خموش تاروں سے

چھن رہا ہے خمارِ کیف آگیں

آرزو، خواب، تیرا روئے حسیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

انتظار

گزر رہے ہیں شب و روز تم نہیں آتیں

ریاضِ زیست ہے آزردۂ بہار ابھی

مرے خیال کی دنیا ہے سوگوار ابھی

جو حسرتیں ترے غم کی کفیل ہیں پیاری

ابھی تلک مری تنہائیوں میں بستی ہیں

طویل راتیں ابھی تک طویل ہیں پیاری

اداس آنکھوں تری دید کوترستی ہیں

بہارِ حسن ، پہ پابندئ جفا کب تک؟

یہ آزمائشِ صبرِ گریز پا کب تک؟

قسم تمہاری بہت غم اٹھا چکا ہوں میں

غلط تھا دعوئ صبرو شکیب، آجاؤ

قرارِ خاطرِ بیتاب، تھک گیا ہوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تہِ نجوم

تہِ نجوم ، کہیں چاندنی کے دامن میں

ہجومِ شوق سے اک دل ہے بے قرار ابھی

خمارِ خواب سے لبریز احمریں آنکھیں

سفید رخ پہ پریشان عنبریں آنکھیں

چھلک رہی ہے جوانی ہر اک بنِ مو سے

رواں ہو برگِ گلِ تر سے جیسے سیلِ شمیم

ضیاء مہ میں دمکتا ہے رنگِ پیراہن

ادائے عجز سے آنچل اُڑا رہی ہے نسیم

دراز قد کی لچک سے گداز پیدا ہے

ادائے ناز سے رنگِ نیاز پیدا ہے

اداس آنکھوں میں خاموش التجائیں ہیں

دل حزیں میں کئی جاں بلب دعائیں ہیں

تہِ نجوم کہیں چاندنی کے دامن میں

کسی کا حسن ہے مصروف انتظار ابھی

کہیں خیال کے آباد کردہ گلشن میں

ہے ایک گل کہ ہے ناواقفِ بہار ابھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

حسن اور موت

جو پھول سارے گلستاں میں سب سے اچھا ہو

فروغِ نور ہو جس سے فضائے رنگیں میں

خزاں کے جورو ستم کو نہ جس نے دیکھا ہو

بہار نے جسے خونِ جگر سے پالا ہو

وہ ایک پھول سماتا ہے چشمِ گلچیں میں

ہزار پھولوں سے آباد باغِ ہستی ہے

اجل کی آنکھ فقط ایک کو ترستی ہے

کئی دلوں کی امیدوں کا جو سہارا ہو

فضائے دہر کی آلودگی سے بالا ہو

جہاں میں آکے ابھی جس نے کچھ نہ دیکھا ہو

نہ قحط عیش و مسرت ، نہ غم کی ارزانی

کنارِ رحمتِ حق میں اسے سلاتی ہے

سکوتِ شب میں فرشتوں کی مرثیہ خوانی

طواف کرنے کوصبح بہار آتی ہے

صبا چڑھانے کو جنت کے پھول لاتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تین منظر

تصور

شوخیاں مضطر نگاہِ دید سرشار میں

عشرتیں خوابیدہ رنگِ غازۂ رخسار میں

سرخ ہونٹوں پر تبسم کی ضیائیں جس طرح

یاسمن کے پھول ڈوبے ہوں مے گلنار میں

سامنا

چھنتی ہوئی نظروں سے جذبات کی دنیائیں

بے خوابیاں، افسانے، مہتاب، تمنائیں

کچھ الجھی ہوئی باتیں، کچھ بہکے ہوئے نغمے

کچھ اشک جو آنکھوں سے بے وجہ چھلک جائیں

رخصت

فسردہ رخ، لبوں پر اک نیاز آمیز خاموشی

تبسم مضمحل تھا، مرمریں ہاتھوں میں لرزش تھی

وہ کیسی بے کسی تھی تیری پر تمکیں نگاہوں میں

وہ کیا دکھ تھا تری سہمی ہوئی خاموش آہوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سرود

موت اپنی، نہ عمل اپنا، نہ جینا اپنا

کھو گیا شورشِ گیتی میں قرینہ اپنا

ناخدا دور، ہوا تیز ، قریں کامِ نہنگ

وقت ہے پھینک دے لہروں میں سفینہ اپنا

عرصۂ دہر کے ہنگامے تہِ خواب سہی

گرم رکھ آتشِ پیکار سے سینہ اپنا

ساقیا رنج نہ کر جاگ اُٹھے گی محفل

اور کچھ دیر اٹھا رکھتے ہیں پینا اپنا

بیش قیمت ہیں یہ غم ہائے محبت، مت بھول

ظلمتِ یاس کو مت سونپ خزینہ اپنا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یاس

بربطِ دل کے تار ٹوٹ گئے

ہیں زمیں بوس راحتوں کے محل

مٹ گئے قصہ ہائے فکر و عمل!

بزمِ ہستی کے جام پھوٹ گئے

چھن گیا کیفِ کوثر و تسنیم

زحمتِ گریۂ و بکا بے سود

شکوۂ بختِ نارسا بے سود

ہوچکا ختم رحمتوں کا نزول

بند ہے مدتوں سے بابِ قبول

بے نیازِ دعا ہے ربِ کریم

بجھ گئی شمعِ آرزوئے جمیل

یاد باقی ہے بے کسی کی دلیل

اتتظارِ فضول رہنے دے

رازِ الفت نباہنے والے

یارِ غم سے کراہنے والے

کاوشِ بے حصول رہنے دے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

آج کی رات

آج کی رات سازِ درد نہ چھیڑ

دکھ سے بھر پور دن تمام ہوئے

اور کل کی خبر کسے معلوم

دوش و فردا کی مٹ چکی ہیں حدود

ہو نہ ہو اب سحر، کسے معلوم؟

زندگی ہیچ! لیکن آج کی رات

ایزدیت ہے ممکن آج کی رات

آج کی رات سازِ درد نہ چھیڑ

اب نہ دہرا فسانہ ہائے الم

اپنی قسمت پہ سوگوار نہ ہو

فکرِ فردا اتار دے دل سے

عمر رفتہ پہ اشکبار نہ ہو

عہدِ غم کی حکایتیں مت پوچھ

ہو چکیں سب شکایتیں مت پوچھ

آج کی رات سازِ درد نہ چھیڑ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک رہگزر پر

وہ جس کی دید میں لاکھوں مسرتیں پنہاں

وہ حسن جس کی تمنا میں جنتیں پنہاں

ہزار فتنے تہِ پائے ناز، خاک نشیں

ہر اک نگاہِ خمارِ شباب سے رنگیں

شباب جس سے تخیّل پہ بجلیاں برسیں

وقار، جس کی رفاقت کو شوخیاں ترسیں

ادائے لغزشِ پا پر قیامتیں قرباں

بیاضِ رخ پہ سحر کی صباحتیں قرباں

سیاہ زلفوں میں وارفتہ نکہتوں کا ہجوم

طویل راتوں کی خوابیدہ راحتوں کا ہجوم

وہ آنکھ جس کے بناؤ پہ خالق اِترائے

زبانِ شعر کی تعریف کرتے شرم آئے

وہ ہونٹ فیض سے جن کے بہارِ لالہ فروش

بہشت و کوثر و تسنیم و سلسبیل بدوش

گداز جسم ، قبا جس پہ سج کے ناز کرے

دراز قد جسے سروِ سہی نماز کرے

غرض وہ حسن جو محتاجِ وصف و نام نہیں

وہ حسن جس کا تصور بشر کا کام نہیں

کسی زمانے میں اس رہگزر سے گزرا تھا

بصد غرور و تجمّل، ادھر سے گزرا تھا

اور اب یہ راہگزر بھی ہے دلفریب و حسیں

ہے اس کی خاک میں کیف ِ شراب و شعر مکیں

ہوا میں شوخئ رفتار کی ادائیں ہیں

فضا میں نرمئ گفتار کی صدائیں ہیں

غرض وہ حسن اب اس رہ کا جزوِ منظر ہے

نیازِ عشق کو اک سجدہ گہ میسر ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ایک منظر

بام و در خامشی کے بوجھ سے چور

آسمانوں سے جوئے درد رواں

چاند کا دکھ بھرا فسانۂ نور

شاہراہوں کی خاک میں غلطاں

خواب گاہوں میں نیم تاریکی

مضمحل لَے رباب ہستی کی

ہلکے ہلکے سروں میں نوحہ کناں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میرے ندیم!

خیال و شعر کی دنیا میں جان تھی جن سے

فضائے فکر و عمل ارغوان تھی جن سے

وہ جن کے نور سے شاداب تھےمہ و انجم

جنونِ عشق کی ہمت جوان تھی جن سے

وہ آرزوئیں کہاں سو گئیں ہیں میرے ندیم؟

وہ ناصبور نگاہیں، وہ منتظر راہیں

وہ پاسِ ضبط سے دل میں دبی ہوئی آہیں

وہ انتظار کی راتیں، طویل تیرہ و تار

وہ نیم خواب شبستاں، وہ مخملیں باہیں

کہانیاں تھیں، کہیں کھو گئی ہیں، میرے ندیم

مچل رہا ہے رگِ زندگی میں خونِ بہار

الجھ رہے ہیں پرانے غموں سے روح کے تار

چلو کہ چل کے چراغاں کریں دیارِ حبیب

ہیں انتظار میں اگلی محبتوں کے مزار

محبتیں جو فنا ہو گئیں ہیں میرے ندیم!

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

مجھ سے پہلی سی محبت مری محبوب نہ مانگ

میں نے سمجھا تھا کہ تو ہے تو درخشاں ہے حیات

تیرا غم ہے تو غمِ دہر کا جھگڑا کیا ہے

تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات

تیری آنکھوں کے سوا دنیا میں رکھا کیا ہے؟

تو جو مل جائے تو تقدیر نگوں ہو جائے

یوں نہ تھا، میں نے فقط چاہا تھا یوں ہو جائے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا

راحتیں اور بھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

ان گنت صدیوں کے تاریک بہیمانہ طلسم

ریشم و اطلس و کمخاب میں بُنوائے ہوئے

جابجا بکتے ہوئے کوچہ و بازار میں جسم

خاک میں لتھڑے ہوئے خون میں نہلائے ہوئے

لوٹ جاتی ہے ادھر کو بھی نظر کیا کیجے

اب بھی دلکش ہے ترا حسن مگر کیا کیجے

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں میں محبت کے سوا

راحتیں او ربھی ہیں وصل کی راحت کے سوا

مجھ سے پہلی سے محبت مری محبوب نہ مانگ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سوچ

کیوں میرا دل شاد نہیں

کیوں خاموش رہا کرتا ہوں

چھوڑو میری رام کہانی

میں جیسا بھی ہوں اچھا ہوں

میرا دل غمگیں ہے تو کیا

غمگیں یہ دنیا ہے ساری

یہ دکھ تیرا ہے نہ میرا

ہم سب کی جاگیر ہے پیاری

تو گر میری بھی ہو جائے

دنیا کے غم یونہی رہیں گے

پاپ کے پھندے، ظلم کے بندھن

اپنے کہے سے کٹ نہ سکیں گے

غم ہر حالت میں مہلک ہے

اپنا ہو یا اور کسی کا

رونا دھونا، جی کو جلانا

یوں بھی ہمارا، یوں بھی ہمارا

کیوں نہ جہاں کا غم اپنا لیں

بعد میں سب تدبیریں سوچیں

بعد میں سکھ کے سپنے دیکھیں

سپنوں کی تعبیریں سوچیں

بے فکرے دھن دولت والے

یہ آخر کیوں خوش رہتے ہیں

ان کا سکھ آپس میں بانٹیں

یہ بھی آخر ہم جیسے ہیں

ہم نے مانا جنگ کڑی ہے

سر پھوڑیں گے ، خون بہے گا

خون میں غم بھی بہہ جائیں گے

ہم نہ رہیں ، غم بھی نہ رہے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رقیب سے

آکہ وابستہ ہیں اس حسن کی یادیں تجھ سے

جس نے اس دل کو پری خانہ بنا رکھا تھا

جس کی الفت میں بھُلا رکھی تھی دنیا ہم نے

دہر کو دہر کا افسانہ بنا رکھا تھا

آشنا ہے ترے قدموں سے وہ راہیں جن پر

اس کی مدہوش جوانی نے عنایت کی ہے

کارواں گزرے ہیں جن سے اُسی رعنائی کے

جس کی ان آنکھوں نے بے سود عبادت کی ہے

تجھ سے کھیلی ہیں وہ محبوب ہوائیں جن میں

اس کے ملبوس کی افسردہ مہک باقی ہے

تجھ پہ بھی برسا ہے اُس بام سے مہتاب کا نور

جس میں بیتی ہوئی راتوں کی کسک باقی ہے

تو نے دیکھی ہے وہ پیشانی، وہ رخسار، وہ ہونٹ

زندگی جن کے تصور میں لٹا دی ہم نے

تجھ پہ اُٹھی ہیں وہ کھوئی ہوئی ساحر آنکھیں

تجھ کو معلوم ہے کیوں عمر گنوا دی ہم نے

ہم پہ مشترکہ ہیں احسان غمِ الفت کے

اتنے احسان کہ گنواؤں تو گنوا نہ سکوں

ہم نے اس عشق میں کیا کھویا ہے کیا سیکھا ہے

جز ترے اور کو سمجھاؤں تو سمجھا نہ سکوں

عاجزی سیکھی ، غریبوں کی حمایت سیکھی

یاس حرماں کے، دکھ درد کے معنی سیکھے

زیر دستوں کے مصائب کو سمجھنا سیکھا

سرد آہوں کے رخ زرد کے معنی سیکھے

جب کہیں بیٹھ کے روتے ہیں وہ بیکس جن کے

اشک آنکھوں میں بلکتے ہوئے سو جاتے ہیں

ناتوانوں کے نوالوں پہ جھپٹتے ہیں عقاب

بازو تولے ہوئے منڈ لاتے ہوئے آتے ہیں

جب کبھی بکتا ہے بازار میں مزدور کا گوشت

شاہراہوں پہ غریبوں کا لہو بہتا ہے

آگ سی سینے میں رہ رہ کے ابلتی ہے نہ پوچھ

اپنے دل پر مجھے قابو ہی نہیں رہتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تنہائی

پھر کوئی آیا دلِ زار! نہیں کوئی نہیں

راہرو ہوگا، کہیں اور چلا جائے گا

ڈھل چکی رات، بکھرنے لگا تاروں کا غبار

لڑکھڑانے لگے ایوانوں میں خوابیدہ چراغ

سوگئی راستہ تک تک کے ہر اک راہگزار

اجنبی خاک نے دھندلا دیے قدموں کے سراغ

گل کرو شمعیں، بڑھا دو مے و مینا و ایاغ

اپنے بے خواب کواڑوں کو مقفل کر لو

اب یہاں کوئی نہیں، کوئی نہیں آئے گا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

چند روز اور مری جان!

چند روز اور مری جان! فقط چند ہی روز

ظلم کی چھاؤں میں دم لینے پہ مجبور ہیں ہم

اور کچھ دیر ستم سہہ لیں، تڑپ لیں، رولیں

اپنے اجداد کی میراث ہے معذور ہیں ہم

جسم پر قید ہے، جذبات پہ زنجیریں ہیں

فکر محبوس ہے، گفتار پہ تعزیریں ہیں

اپنی ہمت ہے کہ ہم پھر بھی جیے جاتے ہیں

زندگی کیا کسی مفلس کی قبا ہے جس کے

ہر گھڑی درد کے پیوند لگے جاتے ہیں

لیکن اب ظلم کی میعاد کےدن تھوڑے ہیں

اک ذرا صبر، کہ فریاد کے دن تھوڑے ہیں

عرصۂ دہر کی جھلسی ہوئی ویرانی میں

ہم کو رہنا ہے پہ یونہی تو نہیں رہنا ہے

اجنبی ہاتھوں کا بے نام گرانبار ستم

آج سہنا ہے، ہمیشہ تو نہیں سہنا ہے

یہ ترے حسن سے لپٹی ہوئی آلام کی گرد

اپنی دو روزہ جوانی کی شکستوں کا شمار

چاندنی راتوں کا بے کار دہکتا ہوا درد

دل کی بے سود تڑپ، جسم کی مایوس پکار

چند روز اور مری جان! فقط چند ہی روز

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

مرگِ سوز محبت

آؤ کہ مرگِ سوزِ محبت منائیں ہم

آؤ کہ حسنِ ماہ سے دل کو جلائیں ہم

خوش ہوں فراقِ قامت و رخسارِ یار سے

سرو گل و سمن سے نظر کو ستائیں ہم

ویرانیِ حیات کو ویران تر کریں

لے ناصح آج تیرا کہا مان جائیں ہم

پھر اوٹ لے کے دامنِ ابرِبہار کی

دل کو منائیں ہم کبھی آنسو بہائیں ہم

سلجھائیں بے دلی سے یہ الجھے ہوئے سوال

واں جائیں یا نہ جائیں ، نہ جائیں کہ جائیں ہم

پھر دل کو پاسِ ضبط کی تلقین کر چکیں

اور امتحانِ ضبط سے پھر جی چرائیں ہم

آؤ کہ آج ختم ہوئی داستانِ عشق

اب ختمِ عاشقی کے فسانے سنائیں ہم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کتے

یہ گلیوں کے آوارہ بے کار کتے

کہ بخشا گیا جن کو ذوقِ گدائی

زمانے کی پھٹکار سرمایہ اُن کا

جہاں بھر کی دھتکار ان کی کمائی

نہ آرام شب کو، نہ راحت سویرے

غلاظت میں گھر، نالیوں میں بسیرے

جو بگڑیں تو اک دوسرے سے لڑا دو

ذرا ایک روٹی کا ٹکڑا دکھا دو

یہ ہر ایک کی ٹھوکریں کھانے والے

یہ فاقوں سے اکتا کے مرجانے والے

یہ مظلوم مخلوق گر سر اٹھائے

تو انسان سب سرکشی بھول جائے

یہ چاہیں تو دنیا کو اپنا بنا لیں

یہ آقاؤں کی ہڈّیاں تک چبالیں

کوئی ان کو احساسِ ذلّت دلادے

کوئی ان کی سوئی ہوئی دم ہلا دے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بول

بول، کہ لب آزاد ہیں تیرے

بول، زباں اب تک تیری ہے

تیرا ستواں جسم ہے تیرا

بول کہ جاں اب تک تیری ہے

دیکھ کے آہن گر کی دکاں میں

تند ہے شعلے، سرخ ہے آہن

کھلنے لگے قفلوں کے دہانے

پھیلا ہر اک زنجیر کا دامن

بول، یہ تھوڑا وقت بہت ہے

جسم و زباں کی موت سےپہلے

بول، کہ سچ زندہ ہے اب تک

بول، جو کچھ کہنا ہے کہہ لے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اقبال

آیا ہمارے دیس میں اک خوش نوا فقیر

آیا اور اپنی دھن میں غزلخواں گزر گیا

سنسان راہیں خلق سے آباد ہو گئیں

ویران میکدوں کا نصیبہ سنور گیا

تھیں چند ہی نگاہیں جو اس تک پہنچ سکیں

پر اس کاگیت سب کے دلوں میں اتر گیا

اب دور جا چکا ہے وہ شاہِ گدا نما

اور پھر سے اپنے دیس کی راہیں اداس ہیں

چند اک کو یاد ہے کوئی اس کی ادائے خاص

وہ اک نگاہیں چند عزیزوں کے پاس ہیں

پر اُس کا گیت سب کے دلوں میں مقیم ہے

اور اس کی لَے سے سینکڑوں لذت شناس ہیں

اس گیت کے تمام محاسن ہیں لازوال

اس کا وفور اس کا خروش، اس کا سوزوساز

یہ گیت مثلِ شعلۂ جوالہ تند و تیز

اس کی لپک سے بادِ فنا کا جگر گداز

جیسے چراغ وحشتِ صر صر سے بے خطر

یا شمع بزم صبح کی آمد سے بے خبر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

موضوعِ سخن

گل ہوئی جاتی ہے افسردہ سلگتی ہوئی شام

دھل کے نکلے گی ابھی چشمۂ مہتاب سے رات

اور مشتاق نگاہوں کی سنی جائے گی

اور اُن ہاتھوں سے مَس ہوں گے یہ ترسے ہوئے ہات

ان کا آنچل ہے ، کہ رخسار ، کہ پیراہن ہے

کچھ تو ہے جس ہوئی جاتی ہے چلمن رنگیں

جانے اس زلف کی موہوم گھنی چھاؤں میں

ٹمٹماتا ہے وہ آویزہ ابھی تک کہ نہیں

آج پھر حسنِ دلآرا کی وہی دھج ہوگی

وہی خوابیدہ سی آنکھیں، وہی کاجل کی لکیر

رنگِ رخسار پہ ہلکا سا وہ غازے کا غبار

صندلی ہاتھ پہ دھندلی سی حنا کی تحریر

اپنے افکار کی ، اشعار کی دنیا ہے یہی

جانِ مضموں ہے یہی، شاہدِ معنی ہے یہی

آج تک سرخ و سیہ صدیوں کے سائے کے تلے

آدم و حوّا کی اولاد پہ کیا گزری ہے؟

موت اور زیست کی روزانہ صف آرائی میں

ہم پہ کیا گزرے گی، اجداد پہ کیا گزری ہے

ان دمکتے ہوئے شہروں کی فراواں مخلوق

کیوں فقط مرنے کی حسرت میں جیا کرتی ہے؟

یہ حسین کھیت ، پھٹا پڑتا ہے جو بن جن کا!

کس لیے ان میں فقط بھوک اگا کرتی ہے

یہ ہر اک سمت پر اسرار کڑی دیواریں

جل بجھے جن میں ہزاروں کی جوانی کے چراغ

یہ ہر اک گام پہ اُن خوابوں کی مقتل گاہیں

جن کے پرتو سے چراغاں ہیں ہزاروں کےدماغ

یہ بھی ہیں ایسے کئی اور بھی مضموں ہوں گے

لیکن اس شوخ کے آہستہ سے کھلتے ہوئے ہونٹ

ہائے اس جسم کے کمبخت دلآویز خطوط

آپ ہی کہیے کہیں ایسے بھی افسوں ہوں گے

اپنا موضوعِ سخن ان کے سوا اور نہیں

طبعِ شاعر کا وطن ان کے سوا اور نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم لوگ

دل کے ایواں میں لیے گُل شدہ شمعوں کی قطار

نورِ خورشید سے سہمے ہوئے اکتائے ہوئے

حسنِ محبوب کے سیّال تصور کی طرح

اپنی تاریکی کو بھینچے ہوئے لپٹائے ہوئے

غایتِ سود و زیاں، صورتِ آغاز و مآل

وہی بے سود تجسس، وہی بے کار سوال

مضمحل ساعتِ امروز کی بے رنگی سے

یادِ ماضی سے غمیں ، دہشتِ فردا سے نڈھال

تشنہ افکار جو تسکین نہیں پاتے ہیں

سوختہ اشک جو آنکھوں میں نہیں آتے ہیں

اک کڑا درد کہ جو گیت میں ڈھلتا ہی نہیں

دل کے تاریک شگافوں سے نکلتا ہی نہیں

اور اک الجھی ہوئی موہوم سی درماں کی تلاش

دشت و زنداں کی ہوس، چاکِ گریباں کی تلاش

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شاہراہ

ایک افسردہ شاہرہ ہے دراز

دور افق پر نظر جمائے ہوئے

سرد مٹی پہ اپنے سینے کے

سرمگیں حسن کو بچھائے ہوئے

جس طرح کوئی غمزدہ عورت

اپنے ویراں کدے میں محوِ خیال

وصلِ محبوب کے تصور میں

موبموچور، عضو عضو نڈھال

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اے حبیبِ عنبر دست!

کسی کے دستِ عنایت نے کنجِ زنداں میں

کیا ہے آج عجب دل نواز بندوبست

مہک رہی ہے فضا زلفِ یار کی صورت

ہوا ہے گرمئ خوشبو سے اس طرح سرمست

ابھی ابھی کوئی گزرا ہے گل بدن گویا

کہیں قریب سے ، گیسو بدوش ، غنچہ بدست

لیے ہے بوئے رفاقت اگر ہوائے چمن

تو لاکھ پہرے بٹھائیں قفس پہ ظلم پرست

ہمیشہ سبز رہے گی وہ شاخِ مہر و وفا

کہ جس کے ساتھ بندھی ہے دلوں کی فتح و شکست

یہ شعرِ حافظِ شیراز ، اے صبا! کہنا

ملے جو تجھ سے کہیں وہ حبیبِ عنبر دست

خلل پذیر بود ہر بنا کہ مے بینی

بجز بنائے محبت کہ خالی از خلل است

(سنٹرل جیل حیدر آباد ۲۸۔٢٩ اپریل ۵۳٥٣ء)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ملاقات

یہ رات اُس درد کا شجر ہے

جو مجھ سے ، تجھ سے عظیم تر ہے

عظیم تر ہے کہ اس کی شاخوں

میں لاکھ مشعل بکف ستاروں

کے کارواں، گھِر کے کھو گئے ہیں

ہزار مہتاب، اس کے سائے

میں اپنا سب نور، رو گئے ہیں

یہ رات اُس درد کا شجر ہے

جو مجھ سے تجھ سے عظیم تر ہے

مگر اسی رات کے شجر سے

یہ چند لمحوں کے زرد پتے

گرے ہیں، اور تیرے گیسوؤں میں

الجھ کے گلنار ہو گئے ہیں

اسی کے شبنم سے خامشی کے

یہ چند قطرے، تری جبیں پر

برس کے ، ہیرے پرو گئے ہیں

بہت سیہ ہے یہ رات لیکن

اسی سیاہی میں رونما ہے

وہ نہرِ خوں جو مری صدا ہے

اسی کے سائے میں نور گر ہے

وہ موجِ زر جو تری نظر ہے

وہ غم جو اس وقت تیری باہوں

کے گلستاں میں‌سلگ رہا ہے

(وہ غم، جو اس رات کا ثمر ہے)

کچھ اور تپ جائے اپنی آہوں

کی آنچ میں تو یہی شرر ہے

ہر اک سیہ شاخ کی کماں سے

جگر میں‌ٹوٹے ہیں تیر جتنے

جگر سے نوچے ہیں، اور ہر اک

کا ہم نے تیشہ بنا لیا ہے

الم نصیبوں، جگر فگاروں

کی صبح، افلاک پر نہیں ہے

جہاں پہ ہم تم کھڑے ہیں دونوں

سحر کا روشن افق یہیں ہے

یہیں‌پہ غم کے شرار کھل کر

شفق کا گلزار بن گئے ہیں

یہیں پہ قاتل دکھوں کے تیشے

قطار اندر قطار کرنوں

کے آتشیں ہار بن گئے ہیں

یہ غم جو اس رات نے دیا ہے

یہ غم سحر کا یقیں بنا ہے

یقیں جو غم سے کریم تر ہے

سحر جو شب سے عظیم تر ہے

منٹگمری جیل

۱۲ اکتوبر ۳ نومبر ۵۳ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

واسوخت

سچ ہے ہمیں کو آپ کے شکوے بجا نہ تھے

بے شک ستم جناب کے سب دوستانہ تھے

ہاں، جو جفا بھی آپ نے کی قاعدے سے کی!

ہاں، ہم ہی کاربندِ اصولِ وفا نہ تھے

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہرباں

بھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے

کیوں دادِ غم، ہمیں نے طلب کی، برا کیا

ہم سے جہاں میں کشتۂ غم اور کیا نہ تھے

گر فکرِ زخم کی تو خطاوار ہیں کہ ہم

کیوں محوِ مدح خوبئ تیغِ ادا نہ تھے

ہر چارہ گر کو چارہ گری سے گریز تھا

ورنہ ہمیں جو دکھ تھے ، بہت لادوا نہ تھے

لب پر ہے تلخئ مئے ایام ، ورنہ فیضؔ

ہم تلخئ کلام پہ مائل ذرا نہ تھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اے روشنیوں‌کے شہر

سبزہ سبزہ، سوکھ رہی ہے پھیکی، زرد دوپہر

دیواروں‌کو چاٹ رہا ہے تنہائی کا زہر

دور افق تک گھٹتی، بڑھتی ، اُٹھتی، گرتی رہتی ہے

کہر کی صورت بے رونق دردوں کی گدلی لہر

بستا ہے اس کہر کے پیچھے روشنیوں کا شہر

اے روشنیوں کے شہر

کون کہے کس سمت ہے تیری روشنیوں کی راہ

ہر جانب بے نور کھڑی ہے ہجر کی شہر پناہ

تھک کر ہرسو بیٹھ رہی ہے شوق کی ماند سپاہ

آج مرا دل فکر میں ہے

اے روشنیوں کے شہر

شب خوں سے منھ پھیر نہ جائے ارمانوں کی رو

خیر ہو تیری لیلاؤں کی، ان سب سے کہہ دو

آج کی شب جب دیئے جلائیں، اونچی رکھیں لو

لاہور جیل ۲۸ مارچ منٹگمری جیل ۱۵ اپریل ۵۴ء

۔۔۔۔۔۔۔۔

ہم جو تاریک راہوں میں مارے گئے

(ایتھل اور جولیس روز برگ کے خطوط سے متاثر ہو کر لکھی گئ)

تیرے ہونٹوں کے پھولوں کی چاہت میں ہم

دار کی خشک ٹہنی پہ وارے گئے

تیرے ہاتوں‌کی شمعوں کی حسرت میں ہم

نیم تاریک راہوں میں مارے گئے

سولیوں پر ہمارے لبوں سے پرے

تیرے ہونٹوں‌کی لالی لپکتی رہی

تیری زلفوں کی مستی برستی رہی

تیرے ہاتھوں کی چاندی دمکتی رہی

جب گھلی تیری راہوں میں شامِ ستم

ہم چلے آئے ،لائے جہاں تک قدم

لب پہ حرفِ غزل ، دل میں قندیلِ غم

اپنا غم تھا گواہی ترے حسن کی

دیکھ قائم رہے اس گواہی پہ ہم

ہم جو تاریک راہوں‌میں مارے گئے

نارسائی اگر اپنی تقدیر تھی

تیری الفت تو اپنی ہی تدبیر تھی

کس کاشکوہ ہے گر شوق کے سلسلے

ہجر کی قتل گاہوں سے سب جاملے

قتل گاہوں سے چن کر ہمارے علم

اور نکلیں گے عشاق کے قافلے

جن کی راہِ طلب سے ہمارے قدم

مختصر کر چلے درد کے فاصلے

کرچلے جن کی خاطر جہاں گیر ہم

جاں گنوا کر تری دلبری کا بھرم

ہم جو تاریک راہوں میں‌مارے گئے

منٹگمری جیل

۱۵ مئی ۵۴ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دریچہ

گڑی ہیں کتنی صلیبیں مرے دریچے میں

ہر ایک اپنے مسیحا کے خوں کا رنگ لیے

ہر ایک وصلِ خداوند کی امنگ لیے

کسی پہ کرتے ہیں ابرِ بہار کو قرباں

کسی پہ قتل مہِ تابناک کرتے ہیں

کسی پہ ہوتی ہے سرمست شاخسار دونیم

کسی پہ بادِ صبا کو ہلاک کرتے ہیں

ہر آئے دن یہ خداوندگانِ مہر و جمال

لہو میں‌غرق مرے غمکدے میں‌آتے ہیں

اور آئے دن مری نظروں کے سامنے ان کے

شہید جسم سلامت اٹھائے جاتے ہیں

منٹگمری جیل

دسمبر ۵۴ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

درد آئے گا دبے پاؤں۔۔۔۔۔۔

اور کچھ دیر میں ، جب پھر مرے تنہا دل کو

فکر آ لے گی کہ تنہائی کا کیا چارہ کرے

دردآئے گا دبے پاؤں لیے سرخ چراغ

وہ جو اک درد دھڑکتا ہے کہیں دل سے پرے

شعلۂ درد جو پہلو میں لپک اٹھے گا

دل کی دیوار پہ ہر نقش دمک اٹھے گا

حلقۂ زلف کہیں، گوشۂ رخسار کہیں

ہجر کا دشت کہیں، گلشنِ دیدار کہیں

لطف کی بات کہیں، پیار کا اقرار کہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل سے پھر ہوگی مری بات کہ اے دل اے دل

یہ جو محبوب بنا ہے تری تنہائی کا

یہ تو مہماں ہے گھڑی بھر کا، چلا جائے گا

اس سے کب تیری مصیبت کا مداوا ہوگا

مشتعل ہو کے ابھی اٹھّیں گے وحشی سائے

یہ چلا جائے گا، رہ جائیں گے باقی سائے

رات بھر جن سے ترا خون خرابا ہوگا

جنگ ٹھہری ہے کوئی کھیل نہیں ہے اے دل

دشمنِ جاں ہیں سبھی، سارے کے سارے قاتل

یہ کڑی رات بھی ، یہ سائے بھی ، تنہائی بھی

درد اور جنگ میں کچھ میل نہیں ہے اے دل

لاؤ سلگاؤ کوئی جوشِ غضب کا انگار

طیش کی آتشِ جرار کہاں ہے لاؤ

وہ دہکتا ہوا گلزار کہاں سے لاؤ

جس میں گرمی بھی ہے ، حرکت بھی توانائی بھی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہو نہ ہو اپنے قبیلے کا بھی کوئی لشکر

منتظر ہوگا اندھیرے کی فصیلوں کے اُدھر

ان کو شعلوں‌کے رجز اپنا پتا تو دیں‌گے

خیر، ہم تک وہ نہ پہنچیں بھی ، صدا تودیں گے

دور کتنی ہے ابھی صبح ، بتا تو دیں گے

منٹگمری جیل

یکم دسمبر ۵۴ء

AFRICA COME BACK

(ایک رجز)

آجاؤ، میں نے سن لی ترے ڈھول کی ترنگ

آجاؤ، مست ہو گئی میرے لہو کی تال

آجاؤ ایفریقا‘

آجاؤ، میں نے دھول سے ماتھا اٹھا لیا

آجاؤ، میں نے چھیل دی آنکھوں سے غم کی چھال

آجاؤ، میں نے درد سے بازو چھڑا لیا

آجاؤ، میں نے نوچ دیا بے کسی کا جال

آجاؤ ایفریقا‘

پنجے میں ہتھکڑی کی کڑی بن گئی ہے گرز

گردن کا طوق توڑ کے ڈھالی ہے میں نے ڈھال

آجاؤ ایفریقا‘

جلتے ہیں ہر کچھار میں بھالوں کے مرگ نین

دشمن لہو سے رات کی کالک ہوئی ہے لال

آجاؤ ایفریقا‘

دھرتی دھڑک رہی ہے مرے ساتھ ایفریقا

دریا تھرک رہا ہے توبن دے رہا ہے تال

میں ایفریقا ہوں، دھار لیا میں نے تیرا روپ

میں تو ہوں ،میری چال ہے تیری ببر کی چال

آجاؤ ایفریقا‘

آو ببر کیچال

آجاو ایفریقا‘

منٹگمری جیل ٤١ جنوری ٥٥ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ فصل امیدوں کی ہمدم

سب کاٹ دو بسمل پودوں کو

بے آب سسکتے مت چھوڑو

سب نوچ لو

بیکل پھولوں کو

شاخوں پہ بلکتے مت چھوڑو

یہ فصل امیدوں کی ہمدم

اس بار بھی غارت جائے گی

سب محنت، صبحوں شاموں کی

اب کے بھی اکارت جائے گی

کھیتی کے کونوں، کھدروں میں

پھر اپنے لہو کی کھاد بھرو

پھر مٹی سینچو اشکوں سے

پھر اگلی رت کی فکر کرو

پھر اگلی رت کی فکر کرو

جب پھر اک بار اُجڑنا ہے

اک فصل پکی تو بھر پایا

جب تک تو یہی کچھ کرنا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بنیاد کچھ تو ہو

کوئے ستم کی خامشی آباد کچھ تو ہو

کچھ تو کہو ستم کشو، فریاد کچھ تو ہو

بیداد گرسے شکوۂ بیداد کچھ تو ہو

بولو، کہ شورِ حشر کی ایجاد کچھ تو ہو

مرنے چلے تو سطوتِ قاتل کا خوف تھا

اتنا تو ہو کہ باندھنے پائے نہ دست و پا

مقتل میں کچھ‌تو رنگ جمے جشنِ رقص کا

رنگیں لہو سے پنجۂ صیاد کچھ تو ہو

خوں پر گواہ دامنِ جلاّد کچھ تو ہو

جب خونبہا طلب کریں ،بنیاد کچھ تو ہو

گرتن نہیں ، زباں سہی، آزاد کچھ تو ہو

دشنام، نالہ، ہاو ہو، فریاد کچھ تو ہو

چیخے ہے درد، اے دلِ برباد کچھ تو ہو

بولو کہ شورِ حشر کی ایجاد کچھ تو ہو

بولو کہ روزِ عدل کی بنیاد کچھ تو ہو

منٹگمری جیل 13 اپریل 55ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کوئی عاشق کسی محبوبہ سے!

یاد کی راہگزر جس پہ اسی صورت سے

مدتیں بیت گئی ہیں تمہیں چلتے چلتے

ختم ہو جائے جو دو چار قدم اور چلو

موڑ پڑتا ہے جہاں دشتِ فراموشی کا

جس سے آگے نہ کوئی میں ہوں نہ کوئی تم ہو

سانس تھامے ہیں نگاہیں کہ نہ جانے کس دم

تم پلٹ آؤ، گزر جاؤ، یا مڑ کردیکھو

گرچہ واقف ہیں نگاہیں کہ یہ سب دھوکا ہے

گر کہیں‌ تم سے ہم آغوش ہوئی پھر سے نظر

پھوٹ نکلے گی وہاں اور کوئی راہگزر

پھر اسی طرح جہاں ہوگا مقابل پیہم

سایۂ زلف کا اور جنببشِ بازو کا سفر

دوسری بات بھی جھوٹی ہے کہ دل جانتا ہے

یاں کوئی موڑ کوئی دشت کوئی گھات نہیں

جس کے پردے میں‌مرا ماہِ رواں ڈوب سکے

تم سے چلتی رہے یہ راہ، یونہی اچھا ہے

تم نے مڑ کر بھی نہ دیکھا تو کوئی بات نہیں

اگست 55

غزلیں

برواے عقل و منہ منطق و حکمت درپیش

کہ مرا نسخۂ غمہائے فلاں درپیش است

عرفی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ادائے حسن کی معصومیت کو کم کر دے

گناہ گار نظر کو حجاب آتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

تم آئے ہو، نہ شبِ انتظار گزری ہے

تلاش میں ہے سحر، بار بار گزری ہے

جنوں میں جتنی بھی گزری، بکار گزری ہے

اگرچہ دل پہ خرابی ہزار گزری ہے

ہوئی ہے حضرتِ ناصح سے گفتگو جس شب

وہ شب ضرور سرِ کوئے یار گزری ہے

وہ بات سارے فسانے میں جس کا ذکر نہ تھا

وہ بات اُن کو بہت ناگوار گزری ہے

نہ گل کھلے ہیں، نہ اُن سے ملے، نہ مے پی ہے

عجیب رنگ میں اب کے بہار گزری ہے

چمن میں غارتِ گلچیں سے جانے کیا گزری

قفس سے آج صبا بے قرار گزری ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

تمہاری یاد کے جب زخم بھرنے لگتے ہیں

کسی بہانے تمہیں یاد کرنے لگتے ہیں

حدیثِ یار کے عنواں نکھرنے لگتے ہیں

تو ہر حریم میں گیسو سنورنے لگتے ہیں

ہر اجنبی ہمیں محرم دکھائی دیتا ہے

جواب بھی تیری گلی سے گزرنے لگتے ہیں

صبا سے کرتے ہیں غربت نصیب ذکرِ وطن

تو چشمِ صبح میں آنسو اُبھرنے لگتے ہیں

وہ جب بھی کرتے ہیں اس نطق و لب کی بخیہ گری

فضا میں اور بھی نغمے بکھرنے لگتے ہیں

درِ قفس پہ اندھیرے کی مہر لگتی ہے

تو فیض دل میں ستارے اترنے لگتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

شفق کی راکھ میں جل بجھ گیا ستارۂ شام

شبِ فراق کے گیسو فضا میں لہرائے

کوئی پکارو کہ اک عمر ہونے آئی ہے

فلک کو قافلۂ روز و شام ٹھہرائے

یہ ضد ہے یادِ حریفانِ بادہ پیما کی

کہ شب کو چاند نہ نکلے، نہ دن کو ابر آئے

صبا نے پھر درِ زنداں پہ آکے دی دستک

سحر قریب ہے، دل سے کہو نہ گھبرائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

عجزِ اہل ستم کی بات کرو

عشق کے دم قدم کی بات کرو

بزمِ اہل طرب کو شرماؤ

بزمِ اصحابِ غم کی بات کرو

بزمِ ثروت کے خوش نشینوں سے

عظمتِ چشمِ نم کی بات کرو

ہے وہی بات یوں بھی اور یوں بھی

تم ستم یا کرم کی بات کرو

خیر، ہیں اہلِ دیر جیسے ہیں

آپ اہل حرم کی بات کرو

ہجر کی شب تو کٹ ہی جائے گی

روزِ وصلِ صنم کی بات کرو

جان جائیں گے جاننے والے

فیض، فرہاد و جم کی بات کرو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

گرانئ شبِ ہجراں دو چند کیا کرتے

علاجِ درد ترے درد مند کیا کرتے

وہیں لگی ہے جو نازک مقام تھے دل کے

یہ فرق دستِ عدو کے گزند کیا کرتے

جگہ جگہ پہ تھے ناصح تو کُو بکُو دلبر

اِنھیں پسند، اُنھیں ناپسند کیا کرتے

ہمیں نے روک لیا پنجۂ جنوں ورنہ

ہمیں اسیر یہ کوتہ کمند کیا کرتے

جنھیں خبر تھی کہ شرطِ نواگری کیا ہے

وہ خوش نوا گلۂ قید و بند کیا کرتے

گلوئے عشق کو دارو رسن پہنچ نہ سکے

تو لوٹ آئے ترے سر بلند ، کیا کرتے !

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

وہیں ہے دل کے قرائن تمام کہتے ہیں

وہ اِک خلش کہ جسے ترا نام کہتے ہیں

تم آرہے ہو کہ بجتی ہیں میری زنجیریں

نہ جانے کیا مرے دیوار و بام کہتے ہیں

یہی کنارِ فلک کا سیہ تریں گوشہ

یہی ہے مطلعِ ماہِ تمام کہتے ہیں

پیو کہ مفت لگا دی ہے خونِ دل کی کشید

گراں ہے اب کے مئے لالہ فام کہتے ہیں

فقیہہِ شہر سے مے کا جواز کیا پوچھیں

کہ چاندنی کو بھی حضرت حرام کہتے ہیں

نوائے مرغ کو کہتے ہیں اب زیانِ چمن

کھلے نہ پھول ، اسے انتظام کہتے ہیں

کہو تو ہم بھی چلیں فیض، اب نہیں سِردار

وہ فرقِ مرتبۂ خاصہ و عام ، کہتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

رنگ پیرہن کا خوشبو ، زلف لہرانے کا نام

موسمِ گل ہے تمہارے بام پر آنے کا نام

دوستو ، اُس چشم و لب کی کچھ کہو جس کے بغیر

گلستاں کی بات رنگیں ہے، نہ میخانے کا نام

پھر نظر میں پھول مہکے، دل میں پھر شمعیں جلیں

پھر تصور نے لیا اُس بزم میں جانے کا نام

(ق)

دلبری ٹھہرا زبانِ خلق کھلوانے کا نام

اب نہیں لیتے پر رُو زلف بکھرانے کا نام

اب کسی لیلیٰ کو بھی اقرارِ محبو بی نہیں

ان دونوں بدنام ہے ہر ایک دیوانے کا نام

محتسب کی خیر، اونچا ہے اسی کے فیض سے

رند کا ، ساقی کا، مے کا، خم کا ،پیمانے کانام

ہم سے کہتے ہیں چمن والے، غریبانِ چمن

تم کوئی اچھا سا رکھ لو اپنے ویرانے کا نام

فیض اُن کو ہے تقاضائے وفا ہم سے جنھیں

آشنا کے نام سے پیارا ہے بیگانے کا نام

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

دل میں اب یوں ترے بھولے ہوئے غم آتے ہیں

جیسے بچھڑے ہوئے کعبے میں صنم آتے ہیں

ایک اک کرکے ہوئے جاتے ہیں تارے روشن

میری منزل کی طرف تیرے قدم آتے ہیں

رقصِ مے تیز کرو، ساز کی لے تیز کرو

سوئے مے خانہ سفیرانِ حرم آتے ہیں

کچھ ہمیں کو نہیں احسان اُٹھانے کا دماغ

وہ تو جب آتے ہیں، مائل بہ کرم آتے ہیں

اور کچھ دیر گزرے شبِ فرقت سے کہو

دل بھی کم دکھتا ہے، وہ یاد بھی کم آتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

اگست1952ء

روشن کہیں بہار کے امکاں ہوئے تو ہیں

گلشن میں چاک چند گریباں ہوئے تو ہیں

اب بھی خزاں کا راج ہے لیکن کہیں کہیں

گوشے رہِ چمن میں غزلخواں ہوۓ تو ہیں

ٹھہری ہوئی ہے شب کی سیاہی وہیں مگر

کچھ کچھ سحر کے رنگ پَر افشاں ہوۓ تو ہیں

ان میں لہو جلا ہو ہمارا، کہ جان و دل

محفل میں کچھ چراغ فروزاں ہوئے تو ہیں

ہاں کج کرو کلاہ کہ سب کچھ لٹا کے ہم

اب بے نیازِ گردشِ دوراں ہوئے تو ہیں

اہلِ قفس کی صبحِ چمن میں کھلے گی آنکھ

بادِ صبا سے وعدہ و پیماں ہوئے تو ہیں

ہے دشت اب بھی دشت، مگر خونِ پا سے فیض

سیراب چند خارِ مغیلاں ہوئے تو ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

اب وہی حرفِ جنوں سب کی زباں ٹھہری ہے

جو بھی چل نکلی ہے وہ بات کہاں ٹھہری ہے

آج تک شیخ کے اکرام میں جو شے تھی حرام

اب وہی دشمنِ دیں ، راحتِ جاں ٹھہری ہے

ہے خبر گرم کہ پھرتا ہے گریزاں ناصح

گفتگو آج سرِ کوئی بتاں ٹھہری ہے

ہے وہی عارضِ لیلیٰ ، وہی شیریں کا دہن

نگہِ شوق گھڑی بھر کو جہاں ٹھہری ہے

وصل کی شب تھی تو کس درجہ سبک گزری تھی

ہجر کی شب ہے تو کیا سخت گراں ٹھہری ہے

بکھری اک بار تو ہاتھ آئی ہے کب موجِ شمیم

دل سے نکلی ہے تو کب لب پہ فغاں ٹھہری ہے

دستِ صیاد بھی عاجز ، ہے کفِ گلچیں بھی

بوئے گل ٹھہری نہ بلبل کی زباں ٹھہری ہے

آتے آتے یونہی دم بھر کو رکی ہوگی بہار

جاتے جاتے یونہی پل بھر کو خزاں ٹھہری ہے

ہم نے جو طرزِ فغاں کی ہے قفس میں ایجاد

فیض گلشن میں وہی طرزِ بیاں ٹھہری ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

آئے کچھ ابر، کچھ شراب آئے

اس کے بعد آئے جو عذاب آئے

(ق)

بامِ مینا سے ماہتاب اُترے

دستِ ساقی میں، آفتاب آئے

ہر رگِ خوں میں پھر چراغاں ہو

سامنے پھر وہ بے نقاب آئے

عمر کے ہر ورق پہ دل کو نظر

تیری مہر و وفا کے باب آئے

کر رہا تھا غم جہاں کا حساب

آج تم یاد بے حساب آئے

نہ گئی تیرے غم کی سرداری

دل میں یوں روز انقلاب آئے

جل اُٹھے بزم غیر کے دروبام

جب بھی ہم خانماں خراب آئے

(ق)

اس طرح اپنی خامشی گونجی

گویا ہر سمت سے جواب آئے

فیض تھی راہ سربسر منزل

ہم جہاں پہنچے، کامیاب آئے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

نذرِ غالب

کسی گماں پہ توقع زیادہ رکھتے ہیں

پھر آج کوئے بتاں کا ارادہ رکھتے ہیں

بہار آئے گی جب آئے گی، یہ شرط نہیں

کہ تشنہ کام رہیں گرچہ بادہ رکھتے ہیں

تری نظر کا گلہ کیا؟ جو ہے گلہ دل کا

تو ہم سے ہے، کہ تمنا زیادہ رکھتے ہیں

نہیں شراب سے رنگیں تو غرقِ خوں ہیں کہ ہم

خیالِ وضعِ قمیص و لبادہ رکھتے ہیں

غمِ جہاں ہو، غمِ یار ہو کہ تیر ستم

جو آئے، آئے کہ ہم دل کشادہ رکھتے ہیں

جوابِ واعظِ چابک زباں میں فیض ہمیں

یہی بہت ہیں جو دو حرفِ سادہ رکھتے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

تیری صورت جو دلنشیں کی ہے

آشنا شکل ہر حسیں کی ہے

حسن سے دل لگا کے ہستی کی

ہرگھڑی ہم نے آتشیں کی ہے

صبحِ گل ہو کہ شامِ مے خانہ

مدح اس روئے نازنیں کی ہے

شیخ سے بے ہراس ملتے ہیں

ہم نے توبہ ابھی نہیں کی ہے

ذکر دوزخ، بیانِ حور و قصور

بات گویا یہیں کہیں کی ہے

اشک تو کچھ بھی رنگ لا نہ سکے

خوں سے تر آج آستیں کی ہے

کیسے مانیں حرم کے سہل پسند

رسم جو عاشقوں کے دیں کی ہے

فیض اوجِ خیال سے ہم نے

آسماں سندھ کی زمیں کی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

یادِ غزال چشماں، ذکرِ سمن عذاراں

جب چاہا کر لیا ہے کنج قفس بہاراں

آنکھوں میں درد مندی، ہونٹوں پہ عذر خواہی

جانا نہ وار آئی شامِ فراقِ یاراں

ناموسِ جان و دل کی بازی لگی تھی ورنہ

آساں نہ تھی کچھ ایسی راہِ وفا شعاراں

مجرم ہو خواہ کوئی، رہتا ہے ناصحوں کا

روئے سخن ہمیشہ سوئے جگر فگاراں

ہے اب بھی وقت زاہد، ترمیم زہد کر لے

سوئے حرم چلا ہے انبوہِ بادہ خواراں

شاید قریب پہنچی صبحِ وصالِ ہمدم

موجِ صبا لیے ہے خوشبوئے خوش کناراں

ہے اپنی کشتِ ویراں، سرسبز اس یقیں سے

آئیں گے اس طرف بھی اک روز ابرو باراں

آئے گی فیض اک دن بادِ بہار لے کر

تسلیمِ مے فروشاں، پیغامِ مے گساراں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

قرضِ نگاہِ یار ادا کر چکے ہیں ہم

سب کچھ نثارِ راہِ وفا کر چکے ہیں ہم

کچھ امتحانِ دستِ جفا کر چکے ہیں ہم

کچھ اُن کی دسترس کا پتا کر چکے ہیں ہم

اب احتیاط کی کوئی صورت نہیں رہی

قاتل سے رسم و راہ سوا کر چکے ہیں ہم

دیکھیں ہے کون کون، ضرورت نہیں رہی

کوئے ستم میں سب کو خطا کر چکے ہیں ہم

اب اپنا اختیار ہے چاہیں جہاں چلیں

رہبر سے اپنی راہ جد اکر چکے ہیں ہم

ان کی نظر میں، کیا کریں پھیکا ہے اب بھی رنگ

جتنا لہو تھا صرفِ قبا کر چکے ہیں ہم

کچھ اپنے دل کی خو کا بھی شکرانہ چاہیے

سو بار اُن کی خو کا گِلا کر چکے ہیں ہم

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

حسن مرہونِ جوشِ بادۂ ناز

عشق منت کشِ فسونِ نیاز

دل کا ہر تار لرزشِ پیہم

جاں کا ہر رشتہ وقفِ سوزوگداز

سوزشِ دردِ دل کسے معلوم!

کون جانے کسی کے عشق کا راز

میری خاموشیوں میں لرزاں ہے

میرے نالوں کی گم شدہ آواز

ہو چکا عشق، اب ہوس ہی سہی

کیا کریں فرض ہے ادائے نماز

تو ہے اور اک تغافلِ پیہم

میں ہوں اور انتظارِ بے انداز

خوفِ ناکامئ امید ہے فیض

ورنہ دل توڑ دے طلسمِ مجاز

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

عشق منت کشِ قرار نہیں

حسن مجبورِ انتظار نہیں

تیری رنجش کی انتہا معلوم

حسرتوں کا مری شمار نہیں

اپنی نظریں بکھیر دے ساقی

مے باندازۂ خمار نہیں

زیر لب ہے ابھی تبسّمِ دوست

منتشر جلوۂ بہار نہیں

اپنی تکمیل کر رہا ہوں میں

ورنہ تجھ سے تو مجھ کو پیار نہیں

چارۂ انتظار کون کرے

تیری نفرت بھی اُستوار نہیں

فیض زندہ رہیں وہ ہیں تو سہی

کیا ہوا گر وفا شعار نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

ہر حقیقت مجاز ہو جائے

کافروں کی نماز ہو جائے

دل رہینِ نیاز ہو جائے

بے کسی کارساز ہو جائے

منتِ چارہ ساز کون کرے؟

درد جب جاں نواز ہو جائے

عشق دل میں رہے تو رسوا ہو

لب پہ آئے تو راز ہو جائے

لطف کا انتظار کرتا ہوں

جور تا حدِ ناز ہو جائے

عمر بے سود کٹ رہی ہے فیض

کاش افشائے راز ہو جائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

ہمّتِ التجا نہیں باقی

ضبط کا حوصلہ نہیں باقی

اک تری دید چھن گئی مجھ سے

ورنہ دنیا میں کیا نہیں باقی

اپنی مشقِ ستم سے ہاتھ نہ کھینچ

میں نہیں یا وفا نہیں باقی

تیری چشمِ الم نواز کی خیر

دل میں کوئی گلا نہیں باقی

ہو چکا ختم عہدِ ہجر و وصال

زندگی میں مزا نہیں باقی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

چشمِ میگوں ذرا ادھر کر دے

دستِ قدرت کو بے اثر کر دے

تیز ہے آج دردِ دل ساقی

تلخئ مے کو تیز تر کر دے

جوشِ وحشت ہے تشنہ کام ابھی

چاکِ دامن کو تا جگر کر دے

میری قسمت سے کھیلنے والے

مجھ کوقسمت سے بے خبر کر دے

لٹ رہی ہے مری متاعِ نیاز

کاش وہ اس طرف نظر کر دے

فیض تکمیلِ آرزو معلوم!

ہو سکے تو یونہی بسر کر دے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

دونوں جہان تیری محبت میں ہار کے

وہ جا رہا ہے کوئی شبِ غم گزار کے

ویراں ہے میکدہ، خم و ساغر اداس ہیں

تم کیا گئے کہ روٹھ گئے دن بہار کے

اک فرصتِ گناہ ملی ، وہ بھی چار دن

دیکھے ہیں ہم نے حوصلے پروردگار کے

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کر دیا

تجھ سے بھی دلفریب ہیں غم روز گار کے

بھولے سے مسکرا تو دیے تھے وہ آج فیض

مت پوچھ ولولے دلِ ناکردہ کار کے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

وفائے وعدہ نہیں وعدۂ دگر بھی نہیں

وہ مجھ سے روٹھے تو تھے، لیکن اس قدر بھی نہیں

برس رہی ہے حریمِ ہوس میں دولتِ حسن

گدائے عشق کے کاسے میں اک نظر بھی نہیں

نہ جانے کس لیے امّید وار بیٹھا ہوں

اک ایسی راہ پہ جو تیری رہگزر بھی نہیں

نگاہِ شوق سرِ بزم بے حجاب نہ ہو

وہ بے خبر ہی سہی اتنے بے خبر بھی نہیں

یہ عہد ترکِ محبت ہے کس لیے آخر

سکونِ قلب ادھر بھی نہیں ادھر بھی نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

رازِ الفت چھپا کے دیکھ لیا

دل بہت کچھ جلا کے دیکھ لیا

اور کیا دیکھنے کو باقی ہے

آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا

وہ مرے ہو کے بھی مرے نہ ہوئے

ان کو اپنا بنا کے دیکھ لیا

آج ان کی نظر میں کچھ ہم نے

سب کی نظریں بچا کے دیکھ لیا

فیض تکمیلِ غم بھی ہو نہ سکی

عشق کو آزما کے دیکھ لیا

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

کچھ دن سے انتظارِ سوال دگر میں ہے

وہ مضمحل حیا جو کسی کی نظر میں ہے

سیکھی یہیں مرے دلِ کافر نے بندگی

ربِ کریم ہے تو تری رہگزر میں ہے

ماضی میں جو مزا مری شام و سحر میں تھا

اب وہ فقط تصوّرِ شام و سحر میں ہے

کیا جانے کس کو کس سے ہے اب داد کی طلب

وہ غم جو میرے دل میں ہے تیری نظر میں ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

پھر حریفِ بہار ہو بیٹھے

جانےکس کس کو آج رو بیٹھے

تھی، مگر اتنی رائیگاں بھی نہ تھی

آج کچھ زندگی سے کھو بیٹھے

تیرے در تک پہنچ کے لوٹ آئے

عشق کی آبرو ڈبو بیٹھے

ساری دنیا سے دور ہو جائے

جو ذرا تیرے پاس ہو بیٹھے

نہ گئی تیری بے رخی نہ گئی

ہم تری آرزو بھی کھو بیٹھے

فیض ہوتا رہے جو ہونا ہے

شعر لکھتے رہا کرو بیٹھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

پھر لوٹا ہے خورشیدِ جہانتاب سفر سے

پھر نورِ سحر دست و گریباں ہے سحر سے

پھر آگ بھڑکنے لگی ہر سازِ طرب میں

پھر شعلے لپکنے لگے ہر دیدۂ تر سے

پھر نکلا ہے دیوانہ کوئی پھونک کے گھر کو

کچھ کہتی ہے ہر راہ ہر اک راہگزر سے

وہ رنگ ہے امسال گلستاں کی فضا کا

اوجھل ہوئی دیوارِ قفس حدِ نظر سے

ساغر تو کھنکتے ہیں شراب آئے نہ آئے

بادل تو گرجتے ہیں گھٹا برسے نہ برسے

پا پوش کی کیا فکر ہے، دستار سنبھالو

پایاب ہے جو موج گزر جائے گی سر سے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

کئی بار اس کا دامن بھر دیا حسنِ دو عالم سے

مگر دل ہے کہ اس کی خانہ ویرانی نہیں جاتی

کئی بار اس کی خاطر ذرے ذرے کا جگر چیرا

مگر یہ چشمِ حیراں ، جس کی حیرانی نہیں جاتی

نہیں جاتی متاعِ لعل و گوہر کی گراں یابی

متاعِ غیرت و ایماں کی ارزانی نہیں جاتی

مری چشمِ تن آساں کو بصیرت مل گئی جب سے

بہت جانی ہوئی صورت بھی پہچانی نہیں جاتی

سرِ خسرو سے نازِ کج کلاہی چھن بھی جاتا ہے

کلاہِ خسروی سے بوئے سلطانی نہیں جاتی

بجز دیوانگی واں اور چارہ ہی کہو کیا ہے؟

جہاں عقل و خرد کی ایک بھی مانی نہیں جاتی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

نصیب آزمانے کے دن آرہے ہیں

قریب ان کے آنے کے دن آرہے ہیں

جو دل سے کہا ہے، جو دل سے سنا ہے

سب اُن کو سنانے کے دن آرہے ہیں

ابھی سے دل و جاں سرِ راہ رکھ دو

کہ لٹنے لٹانے کے دن آرہے ہیں

ٹپکنے لگی اُن نگاہوں سے مستی

نگاہیں چرانے کے دن آرہے ہیں

صبا پھر ہمیں پوچھتی پھر رہی ہے

چمن کو سجانے کے دن آرہے ہیں

چلو فیض پھر سے کہیں دل لگائیں

سنا ہے ٹھکانے کے دن آرہے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

شیخ صاحب سے رسم و راہ نہ کی

شکر ہے زندگی تباہ نہ کی

تجھ کو دیکھا تو سیر چشم ہُوۓ

تجھ کو چاہا تو اور چاہ نہ کی

تیرے دستِ ستم کا عجز نہیں

دل ہی کافر تھا جس نے آہ نہ کی

تھے شبِ ہجر، کام اور بہت

ہم نے فکرِ دلِ تباہ نہ کی

کون قاتل بچا ہے شہر میں فیضؔ

جس سے یاروں نے رسم وراہ نہ کی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

سب قتل ہوکے تیرے مقابل سے آئے ہیں

ہم لوگ سرخرو ہیں کہ منزل سے آئے ہیں

شمعِ نظر، خیال کے انجم ، جگر کے داغ

جتنے چراغ ہیں، تری محفل سے آئے ہیں

اٹھ کر تو آگئے ہیں تری بزم سے مگر

کچھ دل ہی جانتا ہے کہ کس دل سے آئے ہیں

ہر اک قدم اجل تھا، ہر اک گام زندگی

ہم گھوم پھر کے کوچۂ قاتل سے آئے ہیں

بادِ خزاں کا شکر کرو، فیضؔ جس کے ہاتھ

نامے کہاں بہار شمائل سے آئے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

ستم کی رسمیں بہت تھیں لیکن، نہ تھی تری انجمن سے پہلے

سزا، خطائے نظر سے پہلے، عتاب جرم سخن سے پہلے

جو چل سکو تو چلو کہ راہِ وفا بہت مختصر ہوئی ہے

مقام ہے اب کوئی نہ منزل، فرازِ دارورسن سے پہلے

نہیں رہی اب جنوں کی زنجیر پر وہ پہلی اجارہ داری

گرفت کرتے ہیں کرنے والے خرد پہ دیوانہ پن سے پہلے

کرے کوئی تیغ کا نظارہ، اب اُن کو یہ بھی نہیں گوارا

بضد ہے قاتل کہ جانِ بسمل فگار ہو جسم و تن سے پہلے

غرورِ سرو سمن سے کہہ دو کہ پھر وہی تاجدار ہوں گے

جو خارو خس والئ چمن تھے عروجِ سرو سمن سے پہلے

ادھر تقاضے ہیں مصلحت کے، ادھر تقاضائے دردِ دل ہے

زباں سنبھالیں کہ دل سنبھالیں ، اسیر ذکر وطن سے پہلے

(حیدرآباد جیل ١٧، ٢٢ مئی ٥٤ء)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

شامِ فراق، اب نہ پوچھ، آئی اور آکے ٹل گئی

دل تھا کہ پھر بہل گیا، جاں تھی کہ پھر سنبھل گئی

بزمِ خیال میں ترے حسن کی شمع جل گئی

درد کا چاند بجھ گیا، ہجر کی رات ڈھل گئی

جب تجھے یاد کرلیا، صبح مہک مہک اٹھی

جب ترا غم جگا لیا، رات مچل مچل گئی

دل سے تو ہر معاملہ کرکے چلے تھے صاف ہم

کہنے میں ان کے سامنے بات بدل بدل گئی

آخرِ شب کے ہمسفر فیضؔ نجانے کیا ہوئے

رہ گئی کس جگہ صبا، صبح کدھر نکل گئی

جولائی 53ء جناح ہسپتال کراچی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

رہِ خزاں میں تلاشِ بہار کرتے رہے

شبِ سیہ سے طلب حسنِ یار کرتے رہے

خیالِ یار، کبھی ذکرِ یار کرتے رہے

اسی متاع پہ ہم روزگار کرتے رہے

نہیں شکایتِ ہجراں کہ اس وسیلے سے

ہم اُن سے رشتۂ دل استوار کرتے رہے

وہ دن کہ کوئی بھی جب وجہِ انتظار نہ تھی

ہم اُن میں تیرا سوا انتظار کرتے رہے

ہم اپنے راز پہ نازاں تھے ، شرمسار نہ تھے

ہر ایک سے سخنِ‌ رازدار کرتے رہے

ضیائے بزمِ جہاں بار بار ماند ہوئی

حدیثِ شعلہ رخاں بار بار کرتے رہے

انھیں کے فیضؔ سے بازارِ عقل روشن ہے

جو گاہ گاہ جنوں اختیار کرتے رہے

جناح ہسپتال، کراچی ۲ اگست ۵۳ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

بات بس سے نکل چلی ہے

دل کی حالت سنبھل چلی ہے

اب جنوں حد سے بڑھ چلا ہے

اب طبیعت بہل چلی ہے

اشک خونناب ہو چلے ہیں

غم کی رنگت بدل چلی ہے

یا یونہی، بجھ رہی ہیں شمعیں

یا شبِ ہجر ٹل چلی ہے

لاکھ پیغام ہو گئے ہیں

جب صبا ایک پل چلی ہے

جاؤ اب سو رہو ستارو

درد کی رات ڈھل چلی ہے

منٹگمری جیل ۲۱۔ نومبر ۵۳ء

غزل

شاخ پر خونِ گل رواں ہے وہی

شوخیِ رنگِ گلستاں ہے وہی

سر وہی ہے تو آستاں ہے وہی

جاں وہی ہے تو جانِ جاں‌ہے وہی

اب جہاں مہرباں نہیں کوئی

کوچۂ یارِ مہرباں ہے وہی

برق سو بار گر کے خاک ہوئی

رونقِ خاکِ آشیاں ہے وہی

آج کی شب وصال کی شب ہے

دل سے ہر روز داستاں ہے وہی

چاند تارے ادھر نہیں آتے

ورنہ زنداں میں‌ آسماں ہے وہی

منٹگمری جیل

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

کب یاد میں تیرا ساتھ نہیں، کب ہات میں تیرا ہات نہیں

صد شکر کہ اپنی راتوں میں اب ہجر کی کوئی رات نہیں

مشکل ہے اگر حالات وہاں، دل بیچ آئیں جاں دے آئیں

دل والو کوچۂ جاناں میں‌کیا ایسے بھی حالات نہیں

جس دھج سے کوئی مقتل میں گیا، وہ شان سلامت رہتی ہے

یہ جان توآنی جانی ہے ، اس جاں کی تو کوئی بات نہیں

میدانِ وفا دربار نہیں یاں‌ نام و نسب کی پوچھ کہاں

عاشق تو کسی کا نام نہیں، کچھ عشق کسی کی ذات نہیں

گر بازی عشق کی بازی ہے جو چاہو لگا دو ڈر کیسا

گرجیت گئے تو کیا کہنا، ہارے بھی تو بازی مات نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

ہم پر تمہاری چاہ کا الزام ہی تو ہے

دشنام تو نہیں ہے، یہ اکرام ہی تو ہے

کرتے ہیں جس پہ طعن کوئی جرم تو نہیں

شوقِ فضول و الفتِ ناکام ہی تو ہے

دل مدّعی کے حرفِ ملامت سے شاد ہے

اے جانِ جاں یہ حرف ترا نام ہی تو ہے

دل ناامید تو نہیں، ناکام ہی تو ہے

لبمی ہے غم کی شام مگر شام ہی تو ہے

دستِ فلک میں گردشِ تقدیر تو نہیں

دستِ فلک میں گردشِ ایّام ہی تو ہے

آخر تو ایک روز کرے گی نظر وفا

وہ یارِ خوش خصال سرِ بام ہی تو ہے

بھیگی ہے رات فیضؔ غزل ابتدا کرو

وقتِ سرود، درد کا ہنگام ہی تو ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

گلوں میں رنگ بھرے بادِ نو بہار چلے

چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے

قفس اداس ہے یارو صبا سے کچھ تو کہو

کہیں تو بہرِ خدا آج ذکرِ یار چلے

کبھی تو صبح ترے کنجِ لب سے ہو آغاز

کبھی تو شب سرِ کاکل سے مشکبار چلے

بڑا ہے درد کا رشتہ، یہ دل غریب سہی

تمہارے نام پہ آئیں گے غمگسار چلے

جو ہم پہ گزری سو گزری مگر شبِ ہجراں

ہمارے اشک تری عاقبت سنوار چلے

حضورِ ‌یار ہوئی دفترِ جنوں کی طلب

گرہ میں لے کے گریباں کا تار تار چلے

مقام،فیضؔ ، کوئی راہ میں جچا ہی نہیں

جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے

منٹگمری جیل ۲۹ جنوری ۵۴ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

کچھ محتسبوں کی خلوت میں، کچھ واعظ کے گھر جاتی ہے

ہم بادہ کشوں کے حصے کی، اب جام میں کمتر آتی ہے

یوں عرض و طلب سے کب اے دل، پتھردل پانی ہوتے ہیں

تم لاکھ رضا کی خو ڈالو، کب خوئے ستمگر جاتی ہے

بیداد گروں کی بستی ہے یاں داد کہاں خیرات کہاں

سرپھوڑتی پھرتی ہے ناداں فریاد جو در در جاتی ہے

ہاں، جاں کے زیاں کی ہم کو بھی تشویش ہے لیکن کیا کیجے

ہر رہ جو اُدھر کو جاتی ہے، مقتل سے گزر کر جاتی ہے

اب کوچۂ دلبر کا رہرو، رہزن بھی بنے تو بات بنے

پہرے سے عدو ٹلتے ہی نہیں اور رات برابر جاتی ہے

ہم اہلِ قفس تنہا بھی نہیں، ہرروز نسیمِ صبحِ وطن

یادوں سے معطر آتی ہے اشکوں سے منور جاتی ہے

منٹگمری جیل 17 جون 54ء

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

گرمیِ شوقِ نظارہ کا اثر تو دیکھو

گل کھِلے جاتے ہیں وہ سایۂ در تو دیکھو

ایسے ناداں بھی نہ تھے جاں سے گزرنے والے

ناصحو ، پندگرو، راہگزر تو دیکھو

وہ تو وہ ہے، تمہیں ہوجاۓ گی الفت مجھ سے

اک نظر تم مرا محبوبِ نظر تو دیکھو

وہ جواب چاک گریباں بھی نہیں کرتے ہیں

دیکھنے والو کبھی اُن کا جگر تو دیکھو

دامنِ درد کو گلزار بنا رکھا ہے

آؤ اک دن دلِ پرخوں کا ہنر تو دیکھو

صبح کی طرح جھمکتا ہے شبِ غم کا افق

فیضؔ، تابندگئ دیدۂ تر تو دیکھو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

یوں بہار آئی ہے اس بار کے جیسے قاصد

کوچۂ یار سے بے نیلِ‌مرام آتا ہے

ہر کوئی شہر میں پھرتا ہے سلامت دامن

رند میخانے سے شائستہ خرام آتا ہے

ہوسِ‌مطرب و ساقی میں‌پریشاں اکثر

ابر آتا ہے کبھی ماہِ تمام آتا ہے

شوق والوں‌کی حزیں‌محفلِ شب میں اب بھی

آمدِ صبح کی صورت ترا نام آتا ہے

اب بھی اعلانِ سحر کرتا ہوا مست کوئی

داغِ دل کرکے فروزاں سرِ شام آتا ہے

(ناتمام)

مارچ ۵۴لاہور

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

صبح کی آج جو رنگت ہے وہ پہلے تو نہ تھی

کیا خبر آج خراماں سرِ‌گلزار ہے کون

شام گلنار ہوئی جاتی ہے دیکھو تو سہی

یہ جو نکلا ہے لیے مشعلِ رخسار، ہے کون

رات مہکی ہوئی آتی ہے کہیں سے پوچھو

آج بکھرائے ہوئے زلفِ طرحدار ہے کون

پھر درِ دل پہ کوئی دینے لگا ہے دستک

جانیے پھر دلِ وحشی کا طلبگار ہے کون

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل

تری امید، ترا انتظار جب سے ہے

نہ شب کو دن سے شکایت نہ دن کو شب سے ہے

کسی کا درد ہو، کرتے ہیں تیرے نام رقم

گلہ ہے جو بھی کسی سے ترے سبب سے ہے

ہوا ہے جب سے دلِ ناصبور بے قابو

کلام تجھ سے نظر کو بڑے ادب سے ہے

اگر شرر ہے تو بھڑکے، جو پھول ہے تو کھِلے

طرح طرح کی طلب، تیرے رنگِ لب سے ہے

کہاں گئے شبِ فرقت کے جاگنے والے

ستارۂ سحری ہم کلام کب سے ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

لاہور مارچ ۵۷

غزل

شہر میں‌چاک گریباں ہوئے ناپید اب کے

کوئی کرتا ہی نہیں ضبط کی تاکید اب کے

لطف کر، اے نگہِ یار ، کہ غم والوں‌ نے

حسرتِ دل کی اُٹھائی نہیں‌تمہید اب کے

چاند دیکھا تری آنکھوں میں ، نہ ہونٹوں پہ شفق

ملتی جلتی ہے شبِ غم سے تری دید اب کے

دل دکھا ہے نہ وہ پہلا سا، نہ جاں تڑپی ہے

ہم ہی غافل تھے کہ آئی ہی نہیں عید اب کے

پھر سے بجھ جائیں گی شمعیں‌جو ہوا تیز چلی

لاکے رکھو سر محفل کوئی خورشید اب کے

قطعات اور اشعار

اے ساکنانِ کنجِ قفس! صبح کو صبا

سنتی ہی جائے گی سوئے گلزار ، کچھ کہو!

(سودا)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات ڈھلنے لگی ہے سینوں میں

آگ سلگاؤ آبگینوں میں

دلِ عشّا ق کی خبر لینا

پھول کھلتے ہیں ان مہینوں میں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نہ پوچھ جب سے ترا انتظار کتنا ہے

کہ جن دنوں سے مجھے تیرا انتظار نہیں

ترا ہی عکس ہے اُن اجنبی بہاروں میں

جو تیرے لب، ترے بازو، ترا کنار نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

صبا کے ہاتھ میں نرمی ہے ان کے ہاتھوں کی

ٹھہر ٹھہر کے یہ ہوتا ہے آج دل کو گماں

وہ ہاتھ ڈھونڈ رہے ہیں بساطِ محفل میں

کہ دل کے داغ کہاں ہیں نشستِ درد کہاں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

پھر حشر کے ساماں ہوئے ایوانِ ہوس میں

بیٹھے ہیں ذوی العدل گنہگار کھڑے ہیں

ہاں جرمِ وفا دیکھیے کس کس پہ ہے ثابت

وہ سارے خطا کار سرِ دار کھڑے ہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ترا جمال نگاہوں میں لے کے اُٹھا ہوں

نکھر گئی ہے فضا تیرے پیرہن کی سی

نسیم تیرے شبستاں سے ہو کے آئی ہے

مری سحر میں مہک ہے ترے بدن کی سی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ہمارے دم سے ہے کوئے جنوں میں اب بھی خجل

عبائے شیخ و قبائے امیر و تاج شہی

ہمیں سے سنتِ منصور و قیس زندہ ہے

ہمیں سے باقی ہے گل دامنی و کجکلہی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

میخانے کی رونق ہیں کبھی خانقہوں کی

اپنالی ہوس والوں نے جو رسم چلی ہے

دلدارئ واعظ کو ہمیں باقی ہیں ورنہ

اب شہر میں ہر رندِ خرابات ولی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

رات یوں دل میں تری کھوئی ہوئی یاد آئی

جیسے ویرانے میں چپکے سے بہار آ جائے

جیسے صحراؤں میں ہولے سےچلے بادِ نسیم

جیسے بیمار کو بے وجہ قرار آجائے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل رہینِ غمِ جہاں ہے آج

ہر نفس تشنۂ فغاں ہے آج

سخت ویراں ہے محفلِ ہستی

اے غمِ دوست تو کہاں ہے آج

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وقفِ حرمان و یاس رہتا ہے

دل ہے، اکثر اداس رہتا ہے

تم تو غم دے کے بھول جاتے ہو

مجھ کو احساں کا پاس رہتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔

فضائے دل پہ اداسی بکھرتی جاتی ہے

فسردگی ہے کہ جاں تک اترتی جاتی ہے

فریبِ زیست سے قدرت کا مدّعا معلوم

یہ ہوش ہے کہ جوانی گزرتی جاتی ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

فکرِ سود و زیاں تو چھوٹے گی

منتِ ‌این و آں تو چھوٹے گی

خیر، دوزخ میں مے ملے نہ ملے

شیخ صاحب سے جاں تو چھوٹے گی

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

نہ آج لطف کر اتنا کہ کل گزر نہ سکے

وہ رات جو کہ ترے گیسوؤں کی رات نہیں

یہ آرزو بھی بڑی چیز ہے مگر ہمدم

وصالِ یار فقط آرزو کی بات نہیں

۔۔۔۔۔۔۔۔

صبح پھوٹی تو آسماں پہ ترے

رنگِ رخسار کی پھوہار گری

رات چھائی تو روئے عالم پر

تیری زلفوں کی آبشار گری

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمام شب دلِ وحشی تلاش کرتا ہے

ہر اک صدا میں ترے حرفِ‌لطف کا آہنگ

ہر ایک صبح ملاتی ہے بار بار نظر

ترے دہن سے ہر اک لالہ و گلاب کارنگ

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

تمہارے حسن سے رہتی ہے ہمکنار نظر

تمہاری یاد سے دل ہم کلام رہتا ہے

رہی فراغتِ ہجراں تو ہو رہے گا طے

تمہاری چاہ کا جو جو مقام رہتا ہے

کِھلے جو ایک دریچے میں آج حسن کے پھول

تو صبح جھوم کے گلزار ہو گئی یکسر

جہاں کہیں‌ بھی گرا نور اُن نگاہوں سے

ہر ایک چیز طرحدار ہوگئی یکسر

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اشعار

وہ عہدِ غم کی کاہش ہائے بے حاصل کو کیا سمجھے

جو ان کی مختصر روداد بھی صبر آزما سمجھے

یہاں وابستگی، واں برہمی، کیا جانیے کیوں ہے؟

نہ ہم اپنی نظر سمجھے نہ ہم اُن کی ادا سمجھے

فریبِ آرزو کی سہل انگاری نہیں جاتی

ہم اپنے دل کی دھڑکن کو تری آوازِ پا سمجھے

تمہاری ہر نظر سے منسلک ہے رشتۂ ہستی

مگر یہ دور کی باتیں کوئی نادان کیا سمجھے

نہ پوچھو عہدِ الفت کی، بس اک خوابِ پریشاں تھا

نہ دل کو راہ پر لائے نہ دل کا مدعا سمجھے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ترتیب و تدوین: اعجاز عبید
ٹائپنگ: وہاب اعجاز خان
پروف ریڈنگ اور ای بک: اعجاز عبید
اردو لائبریری ڈاٹ آرگ، کتابیں ڈاٹ آئی فاسٹ نیٹ ڈاٹ کام اور کتب ڈاٹ 250 فری ڈاٹ کام کی مشترکہ پیشکش
http://urdulibrary.org, http://kitaben.ifastnet.com, http://kutub.250free.com

About these ads

3 thoughts on “کلیاتِ فیض کا پہلا حصّہ

  1. بھائی میں تو حیران پریشان ہوں کہ آپ نے اتنا لکھ کس طرح لیا۔۔۔ یہ تو لکھتے لکھتے مہینہ لگ گیا ہو گا۔۔۔ اچھا کام ہے۔۔۔

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s